سورة العنكبوت - آیت 53

وَيَسْتَعْجِلُونَكَ بِالْعَذَابِ ۚ وَلَوْلَا أَجَلٌ مُّسَمًّى لَّجَاءَهُمُ الْعَذَابُ وَلَيَأْتِيَنَّهُم بَغْتَةً وَهُمْ لَا يَشْعُرُونَ

ترجمہ تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

اور مشرکین مکہ آپ سے جلد عذاب کا مطالبہ کرتے ہیں اور اگر ایک وقت مقرر (٣١) نہ ہوتا تو ان پر عذاب آہی جاتا ہے اور وہ ان پر اچانک آجائے گا اور انہیں اس کا احساس بھی نہیں ہوگا۔

تفسیرتیسیرالقرآن - مولانا عبدالرحمن کیلانی

[٨٥] اس آیت میں جس عذاب کی جلدی کا مطالبہ کیا جارہا ہے وہ دنیا کا عذاب ہے۔ اور وہ اللہ کے ضابطہ کے مطابق فتح مکہ کے دن آیا تھا۔ جب کفار مکہ کو یک دم مسلمانوں کی یلغار کی خبر ہوئی اور ان میں مقابلہ کی سکت ہی نہ رہی۔