سورة الإنسان - آیت 13

مُّتَّكِئِينَ فِيهَا عَلَى الْأَرَائِكِ ۖ لَا يَرَوْنَ فِيهَا شَمْسًا وَلَا زَمْهَرِيرًا

ترجمہ تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

اس جنت میں اونچی مسندوں پر ٹیک لگائے بیٹھے ہوں گے وہاں نہ دھوپ دیکھیں گے نہ سخت سردی

تفسیر السعدی - عبدالرحمٰن بن ناصر السعدی

﴿مُّتَّکِــــِٕیْنَ فِیْہَا عَلَی الْاَرَایِٕکِ ﴾ ”وہ تختوں پر ٹیک لگائے بیٹھے ہوں گے۔ “(اَلاِتکِاَء) سے مراد اطمینان، راحت اور آسودگی کی حالت میں ٹیک لگا کر بیٹھنا اور الْاَرَایِٕکِ)وہ تخت ہیں جن پر سجاوٹ والے کپڑے بچھائے گئے ہوں۔ ﴿لَا یَرَوْنَ فِیْہَا﴾ یعنی وہ اس جنت کے اندر نہیں دیکھیں گے۔ ﴿ شَمْسًا ﴾ دھوپ جس کی تپش ان کو نقصان پہنچائے۔﴿ وَّلَا زَمْہَرِیْرًا﴾ ”اور نہ سخت سردی“ یعنی ان کے تمام اوقات گہرے سائے میں گذریں گے جہاں گرمی ہوگی نہ سردی، جہاں ان کے جسم لذت حاصل کریں گے وہاں ان کے جسموں کو گرمی سے تکلیف ہوگی نہ سردی سے۔