سورة المؤمنون - آیت 101

فَإِذَا نُفِخَ فِي الصُّورِ فَلَا أَنسَابَ بَيْنَهُمْ يَوْمَئِذٍ وَلَا يَتَسَاءَلُونَ

ترجمہ تیسیر القرآن - مولانا عبدالرحمن کیلانی صاحب

پھر جب صور پھونکا جائے گا تو ان کے درمیان کوئی رشتہ نہ رہے گا اور نہ ہی اس دن کوئی ایک دوسرے [٩٨] کا حال پوچھے گا۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

٣٣۔ یہاں دوسری بار صور پھونکا جانا مراد ہے، جس کے بعد تمام لوگ زندہ ہو کر میدان محشر میں جمع ہونے کے لیے دوڑنے لگیں گے۔ اس وقت لوگوں پر ایسی گھبراہٹ اور خوف و دہشت طاری ہوگی کہ ہر ایک کو اپنی ذات کے سوا کسی سے کوئی دلچسپی نہیں رہے گی۔ جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے سورۃ عبس آیات (٣٤) سے (٣٧) تک میں فرمایا ہے : (یوم یفر المرء من اخیہ۔ وامہ وابیہ۔ وصاحبتہ وبنیہ۔ لکل من امری منھم یومئذ شان یغنیہ) اس دن آدمی اپنے بھائی سے اور اپنی ماں اور اپنے باپ سے اور اپنی بیوی اور اپنی اولاد سے بھاگے گا، ان میں سے ہر ایک کو اس دن اپنی نجات کی ایسی فکر دامن گیر ہوگی جو اس کے لئے کافی ہوگی۔ اور سورۃ المعارج آیت (١٠) میں فرمایا ہے : (ولایسال حمیم حمیما) اس دن کوئی دوست اپنے کسی ودست کو نہیں پوچھے گا۔ اور سورۃ الصافات کی آیت (٢٧) اور سورۃ الطور کی آیت (٢٥) میں جو آیا ہے۔ (واقبل بعضھم علی بعض یتسائلون) اس دن لوگ ایک دوسرے سے پوچھیں گے، تو اس سے معلوم ہوتا ہے کہ لوگوں پر شدید گھبراہٹ قبروں سے نکلنے کے وقت ہوگی، اور ایک دوسرے سے پوچھنے والی بات کسی اور وقت ہوگی، اس لیے کہ آیات و احادیث کے مطالعہ سے اندازہ ہوتا ہے کہ قیامت کا دن طویل ہوگا س۔ اور اس طویل مدت میں لوگ مختلف حالات سے گزریں گے۔