سورة البقرة - آیت 232

وَإِذَا طَلَّقْتُمُ النِّسَاءَ فَبَلَغْنَ أَجَلَهُنَّ فَلَا تَعْضُلُوهُنَّ أَن يَنكِحْنَ أَزْوَاجَهُنَّ إِذَا تَرَاضَوْا بَيْنَهُم بِالْمَعْرُوفِ ۗ ذَٰلِكَ يُوعَظُ بِهِ مَن كَانَ مِنكُمْ يُؤْمِنُ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ ۗ ذَٰلِكُمْ أَزْكَىٰ لَكُمْ وَأَطْهَرُ ۗ وَاللَّهُ يَعْلَمُ وَأَنتُمْ لَا تَعْلَمُونَ

ترجمہ تیسیر القرآن - مولانا عبدالرحمن کیلانی صاحب

نیز جب تم عورتوں کو طلاق دو اور وہ اپنی عدت کو پہنچ جائیں تو انہیں اپنے (پہلے) خاوندوں سے نکاح کرنے سے نہ روکو جبکہ وہ معروف طریقے سے آپس میں نکاح کرنے [٣١٥] پر راضی ہوں۔ جو کوئی تم میں سے اللہ پر اور آخرت کے دن پر ایمان رکھتا ہے اسے اسی بات کی نصیحت کی جاتی ہے۔ یہی تمہارے لیے شائستہ اور پاکیزہ [٣١٦] طریقہ ہے۔ (اپنے احکام کی حکمت) اللہ ہی جانتا ہے تم نہیں جانتے

تسہیل البیان فی تفسیر القرآن - ام عمران شکیلہ بنت میاں فضل حسین

اس آیت میں مطلقہ عورت کے بارے میں ایک تیسرا حکم دیا جارہا ہے کہ (پہلی یا دوسری طلاق) کی عدت گزرنے کے بعد اگر سابقہ خاوند اور بیوی دوبارہ نکاح کرنا چاہیں تو تم ان کو مت روکو۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں ایک ایسا واقعہ ہوا تو اس پر یہ آیت اُتری۔ سیّدنا معقل بن یسار رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میری بہن جمیلہ کو اس کے خاوند عاصم بن عدی نے طلاق رجعی دی مگر رجوع نہ کیا یہاں تک کہ عدت گزر گئی پھر عدت گزرجانے کے بعد دوبارہ مجھے نکاح کے لیے پیغام بھیجا (جبکہ مجھے اور بھی پیغام آچکے تھے) میں نے غیرت اور غصہ کی وجہ سے اُسے بُرا بھلا کہا اور قسم کھالی کہ اب اس سے نکاح نہ ہونے دوں گا اور اس وقت یہ آیت نازل ہوئی اور میں نے اس حکم کے آگے سر تسلیم خم کردیا اور قسم کا کفارہ ادا کردیا۔ (بخاری: ۵۱۳۰) ولی کی اجازت کے بغیر نکاح نہیں: اس سے ایک تو یہ معلوم ہوا کہ عورت اپنا نکاح نہیں کرسکتی بلکہ اس کے نکاح کے لیے ولی کی اجازت اور رضا مندی ضروری ہے۔ اسی لیے اللہ نے ولیوں کو بھی اپنا حق ولایت غلط طریقے سے استعمال کرنے سے روکا ہے۔ اس کی تائید اس حدیث سے ہوتی ہے كہ نبی كریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ’’ ولی کے بغیر نکاح نہیں ہوسکتا ۔‘‘ (بخاری: ۵۰۱۳) ایک اور روایت میں ہے كہ ’’جس عورت نے ولی کی اجازت کے بغیر نکاح کرلیا پس اس کا نکاح باطل ہے اس کا نکاح باطل ہے اس کا نکاح باطل ہے۔ ‘‘(ابوداؤد: ۲۰۸۵۔ ابن ماجہ: ۷۸۷۹) عورت کو ولی کے بغیر نکاح نہیں کرنا اور ولی کو عورت کی رضا مندی بھی ملحوظ خاطر رکھنی ہے اگر ولی عورت کی رضا مندی کے بغیر زبردستی کرکے نکاح کردے تو شریعت نے عورت کو بذریعہ عدالت نکاح نسخ کرانے کا اختیار دیا ہے۔ اس لیے ضروری ہے کہ نکاح میں دونوں فریقوں کی رضا مندی حاصل کی جائے کوئی ایک فریق بھی من مانی نہ کرے اور اگر عورت من مانے طریقے سے ولی کی اجازت کو نظر انداز کرے گی تو وہ نکاح صحیح نہیں ہوگا۔ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ بیوہ یا مطلقہ عورت کا اس وقت تک نکاح نہ کیا جائے جب تک اس سے صاف صاف زبان سے اجازت نہ لی جائے۔ اسی طرح کنواری کا بھی نکاح نہ کیا جائے جب تک وہ اذن نہ دے۔ صحابہ نے عرض کیا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کنواری اذن کیونکردے ۔ آپ نے فرمایا:’’اس کا چپ رہنا ہی اس کا اذن ہے۔‘‘ (بخاری: ۶۹۷۰) شائستہ اور پاکیزہ طریقہ: یعنی عورت کا نکاح ہوجانے میں جو معاشرتی پاکیزگی ہے وہ نکاح نہ ہونے میں نہیں اور جو معاشرتی پاکیزگی عورت کا نکاح اپنے سابقہ خاوند سے ہوجانے میں ہے وہ کسی دوسرے سے نکاح ہونے میں نہیں اور یہ ایسے امور ہیں جنھیں اللہ ہی جانتا ہے تم نہیں جانتے۔