سورة المآئدہ - آیت 92

وَأَطِيعُوا اللَّهَ وَأَطِيعُوا الرَّسُولَ وَاحْذَرُوا ۚ فَإِن تَوَلَّيْتُمْ فَاعْلَمُوا أَنَّمَا عَلَىٰ رَسُولِنَا الْبَلَاغُ الْمُبِينُ

ترجمہ تیسیر القرآن - مولانا عبدالرحمن کیلانی صاحب

اور اللہ کی اطاعت کرو اور اس کے رسول کی اطاعت کرو اور (ان چیزوں سے) َبچو۔ [١٣٧۔ ١] پھر اگر تم نے حکم نہ مانا تو جان لو کہ ہمارے رسول [١٣٨] پر تو صرف واضح طور پر پہنچا دینے کی ذمہ داری ہے

السعدی تفسیر - عبدالرحمن بن ناصر السعدی

آیت 92 اللہ تبارک و تعالیٰ کی اطاعت اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی اطاعت ایک ہی چیز کا نام ہے جو کوئی اللہ تعالیٰ کی اطاعت کرتا ہے وہ رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی اطاعت کرتا ہے اور جو کوئ رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی اطاعت کرتا ہے وہ اللہ کی اطاعت کرتا ہے۔ یہ اطاعت اس بات کو متضمن ہے کہ اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے احکام کی تعمیل کی جائے۔ یعنی ظاہری و باطنی اعمال و اقوال، حقوق اللہ اور حقوق مخلوق سے متعلق واجب اور مستحب اعمال بجالائے جائیں اور اس امر کو متضمن ہے کہ ان امور سے اجتناب کیا جائے جن سے اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے منع کیا ہے۔ اللہ تعالیٰ کی اطاعت اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی اطاعت کا حکم ایک عام حکم ہے جو تمام احکام کو شامل ہے۔ جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ اس میں تمام اوامرونواہی اور ظاہر و باطن شامل ہیں۔ فرمایا : (واحذروا) ” اور ڈرتے رہو۔“ یعنی اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی نافرمانی سے بچو، کیونکہ یہ نافرمانی شر اور واضح خسارے کی موجب ہے (فان تولیتم) ” پس اگر تم اعراض کرو“ یعنی جس چیز کا تمہیں حکم دیا گیا اور جس چیز سے تمہیں روکا گیا ہے اگر تم اس کی تعمیل کرنے سے گریز کرو (فاعلموآ انما علی رسولنا البلغ المبین) ” تو جان لو کہ ہمارے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے ذمہ تو صرف پیغام کا کھول کر پہنچا دینا ہے“ اور اس نے یہ فریضہ ادا کردیا ہے۔ اگر تم راہ راست اختیار کرتے ہو تو اس کا فائدہ تمہارے لئے ہے اور اگر تم برائیوں کا ارتکاب کرتے ہو تو اللہ تعالیٰ تمہارا محاسبہ کرے گا۔ ہمارے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے ذمہ جو کچھ تھا وہ انہوں نے پہنچا دیا۔