سورة المؤمنون - آیت 50

وَجَعَلْنَا ابْنَ مَرْيَمَ وَأُمَّهُ آيَةً وَآوَيْنَاهُمَا إِلَىٰ رَبْوَةٍ ذَاتِ قَرَارٍ وَمَعِينٍ

ترجمہ تیسیر القرآن - مولانا عبدالرحمن کیلانی صاحب

اور ہم نے (عیسیٰ) ابن مریم کو اس کی والدہ کو ایک نشانی [٥١] بنایا اور ایک ایسے ٹیلے [٥٢] پر جگہ دی جو اطمینان بخش تھی اور وہاں چشمہ بھی موجود تھا۔

السعدی تفسیر - عبدالرحمن بن ناصر السعدی

آیت (50)۔ وجعلنا ابن مریم و امۃ ایۃ) یعنی ہم نے عیسیٰ بن مریم ( علیہ السلام) پر احسان کیا‘ ان کو اور ان کی والدہ کو انتہائی تعجب انگیز نشان بنا دیا کیونکہ حضرت مریم (علیہ السلام) نے حضرت عیسیٰ (علیہ السلام) کو بغیر باپ کے اپنے پیٹ میں رکھا اور پھر آپ کو جنم دیا اور حضرت عیسیٰ (علیہ السلام) نے گہوارے میں کلام کیا اور اللہ تعالیٰ نے آپ کے ہاتھ پر بڑے بڑے معجزات دکھائے۔ ( و اوینھما الی ربوۃ) یعنی ہم نے ان دونوں کو ایک بلند مقام پر پناہ دی اور یہ اس وقت کی بات ہے۔۔۔ واللہ اعلم۔۔۔۔ جب حضرت جناب مریم (علیہ السلام) نے عیسیٰ (علیہ السلام) کو جنم دیا۔ ( ذات قرار) یعنی آرام دہ ٹھکانا ( ومعین) یعنی جاری چشمے کا پانی اور اس کی دلیل اللہ تعالیٰ کا یہ ارشاد ہے۔ ( قد جعل ربک تحتک) ” کردی ہے تیرے رب نے تیرے نیچے“ یعنی اس جگہ سے بہت نیچے جہاں حضرت مریم (علیہ السلام) نے پناہ لی تھی اور یہ اس لیے کہا گیا کیونکہ آپ بلند جگہ پر تھیں۔ ( سریا) یعنی ندی اور وہ چشمے کا بہتا ہوا پانی ہے۔ ( وھذی الیک بجدع النخلۃ تسقط علیک رطبا جنیا فکلی واشربی وقزی عینا) ( مریم : (26,24/19” تو کھجور کے تنے کو ہلا تجھ پر تازہ کھجوریں گریں گی۔ کھا‘ پی اور اپنی آنکھوں کو ٹھنڈا کر ‘