سورة الانعام - آیت 162

قُلْ إِنَّ صَلَاتِي وَنُسُكِي وَمَحْيَايَ وَمَمَاتِي لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

کہہ دو کہ : بیشک میری نماز، میری عبادت اور میرا جینا مرنا سب کچھ اللہ کے لیے ہے جو تمام جہانوں کا پروردگار ہے۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(161) اوپر کی آیت میں دین کی بنیادی بات کی طرف اشارہ ہے، اور اس آیت میں بعض جز ئیات کا ذکر کیا گیا ہے، اور نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کو حکم دیا گیا ہے کہ وہ مشرکین کو بتا دیں جو غیر اللہ کی عبادت کرتے ہیں اور غیروں کے نام پر ذبح کرتے ہیں کہ وہ ان کی تمام شرکیہ باتوں میں ان کے مخالف ہیں۔ اور ان کی نماز، ان کی قربانی اور ان کی زندگی اور ان کی موت، سب رب العالمین کے لیے مخصوص ہے، اور آخرری نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے کہا کہ میں اس امت کا پہلا مسلمان ہوں۔ آپ سے پہلے تمام انبیاء نے اسلام ہی کی دعوت دی جس کی بنیاد اللہ تعالیٰ کی وحدانیت اور صرف اس کی عبادت پر ہے۔ نوح، ابراہیم، یعقوب، یوسف، موسی، اور عیسیٰ علیہم السلام سب نے اپنی زبان سے شہادت دی کہ میں مسلمان ہوں اور میرا جینا اور میرا مرنا سب اسی باری تعالیٰ کے لیے ہے اور گذشتہ شریعتیں ایک دوسرے کے ذریعے منسوخ ہوتی رہیں یہاں تک کہ اسلام کے ذریعہ وہ تمام سابقہ شر یعتیں منسوخ ہوگئیں اور اب شریعت محمدی قیامت تک باقی رہے گی۔