سورة الانعام - آیت 145

قُل لَّا أَجِدُ فِي مَا أُوحِيَ إِلَيَّ مُحَرَّمًا عَلَىٰ طَاعِمٍ يَطْعَمُهُ إِلَّا أَن يَكُونَ مَيْتَةً أَوْ دَمًا مَّسْفُوحًا أَوْ لَحْمَ خِنزِيرٍ فَإِنَّهُ رِجْسٌ أَوْ فِسْقًا أُهِلَّ لِغَيْرِ اللَّهِ بِهِ ۚ فَمَنِ اضْطُرَّ غَيْرَ بَاغٍ وَلَا عَادٍ فَإِنَّ رَبَّكَ غَفُورٌ رَّحِيمٌ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

(اے پیغمبر ! ان سے) کہو کہ : جو وحی مجھ پر نازل کی گئی ہے اس میں تو میں کوئی ایسی چیز نہیں پاتا جس کا کھانا کسی کھانے والے کے لیے حرام ہو (٧٦) الا یہ کہ وہ مردار ہو، یا بہتا ہوا خون ہو، یا سور کا گوشت ہو، کیونکہ وہ ناپاک ہے، یا جو ایسا گناہ کا جانور ہو جس پر اللہ کے سوا کسی اور کا نام پکارا گیا ہو۔ ہاں جو شخص (ان چیزوں میں سے کسی کے کھانے پر) انتہائی مجبور ہوجائے (٧٧) جبکہ وہ نہ لذت حاصل کرنے کی غرض سے ایسا کر رہا ہو، اور نہ ضرورت کی حد سے آگے بڑھے، تو بیشک اللہ بہت بخشنے والا، بڑا مہربان ہے۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(145) جانوروں کی تحلیل وتحریم کے بارے میں مشرکین عرب کی خودساختہ شریعت اور ان کی افتر پردازی کو بیان کرنے کے بعد اللہ تعالیٰ نے نبی کریم صلی اللہ علیہو سلم کو حکم دیا کہ اب وہ ان اشیاء کو بیان کردیں جنہیں اللہ نے بندوں کے لیے حرام بنایا ہے، اس کے بعد اللہ نے چار چیزوں کا ذکر فرمایا مردہ جانور" جو موت کی وجہ سے فاسد اور باپاک ہوجاتا ہے، بہنے والا خون، سورکا گوشت جو (نجاستوں کے کھانے کی وجہ سے) ناپاک ہوجاتا ہے، اور وہ جانور جسے بتوں کے نام پر ذبح کیا گیا ہو، اور غیر اللہ کا نام لے کر ذبح کیا گیا ہو، قرآن کریم نے ایسے جانورکو "فسق" کے نام سے اس لیے تعبیر کیا ہے کہ فسق کا معنی قرآن کریم کی اصطلاح میں اسلام سے خارج ہوجاتا ہے، اور غیر اللہ کے نام پر جانور ذبح کرنے سے آدمی دائرہ اسلام سے خارج ہوجاتا ہے۔ اس کے بعد اللہ نے فرمایا کہ اگر کوئی شخص اضطراری حالت میں اپنی جاب بچانے کے لیے ان محرمات میں سے صرف بقدر ضرورت استعمال کرلے تو اللہ تعالیٰ اس کا مواخذہ نہیں کرے گا۔ اس آیت سے معلوم ہو تو ہے کہ مکی زندگی کے اس دورتک محرمات صرف یہی چار چیزیں تھیں، اس کے بعد مدینہ میں سورۃ مائدہ نازل ہوئی، جس ،، میں منخنقہ، موقوذہ، متردیہ اور نطیحہ، کو حرام بتایا گیا، جن کی تفصیل مذکورہ بالا سورت کی تفسیر میں گذ چکی ہے، اور نبی کریم صلی اللہ علیہو سلم کی صحیح احادیث کے ذریعہ ناخن والے جانوروں، پنجے والی چڑیوں، پالتوں گدھوں اور کتوں وغیرہ کی حرمت ثابت ہوئی، اس لیے اس آیت کریمہ کے نزول کے بعد جو مکی ہے قرآن کریم یارسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کی سنت کے ذریعہ جن جانوروں کی حرمت ثابت ہوئی، ہو بھی اسلام میں حرام ہیں۔ امام شوکانی کہتے ہیں کہ ابن عباس، ابن عمر اور عائشہ رضوان اللہ علیہم اجمعین کا قول ہے کہ حرام صرف وہی چیزیں ہیں جن کا ذکر اس آیت میں آیا ہے امام مالک کا بھی یہی قول ہے، لیکن یہ قول لائق اعتبار نہیں ہے، کیونکہ اس سے بغیر کسی دلیل کے قرآن کریم کی ان آیتوں کا اہمال واسقاط لازم آتا ہے جو اس کے بعد نازل ہوئیں۔ اور ان احادیث کا بھی جو مدنی زندگی میں وارد ہوئیں ، اور جابر بن عبداللہ (رض) کا یہ قول کہ علم کے سمندر ابن عباس (رض) نے اسی آیت کے مد نظر پالتو گدھوں کو حلال قرار دیا ہے، جسے امام بخاری نے روایت کی ہے، تو یہ بات لائق اعتناء نہیں ہے اس لیے کہ جب رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی حدیث سے حرمت ظابت ہوگئی تو صحابی کے قول پر عمل کرنا بے سمجھی اور بے انصافی ہے۔