سورة الانعام - آیت 50

قُل لَّا أَقُولُ لَكُمْ عِندِي خَزَائِنُ اللَّهِ وَلَا أَعْلَمُ الْغَيْبَ وَلَا أَقُولُ لَكُمْ إِنِّي مَلَكٌ ۖ إِنْ أَتَّبِعُ إِلَّا مَا يُوحَىٰ إِلَيَّ ۚ قُلْ هَلْ يَسْتَوِي الْأَعْمَىٰ وَالْبَصِيرُ ۚ أَفَلَا تَتَفَكَّرُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

(اے پیغمبر !) ان سے کہو : میں تم سے یہ نہیں کہتا کہ میرے پاس اللہ کے خزانے ہیں اور نہ میں غیب کا (پورا) علم رکھتا ہوں، اور نہ میں تم سے یہ کہتا ہوں کہ میں فرشتہ ہوں (١٧) میں تو صرف اس وحی کی اتباع کرتا ہوں جو مجھ پر نازل کی جاتی ہے۔ کہو کہ : کیا ایک اندھا اور دوسرا بینائی رکھنے والا دونوں برابر ہوسکتے ہیں؟ پھر کیا تم غور نہیں کرتے؟

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(49) اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی سے کہا کہ مشرکین مکہ آپ سے کبھی نشانیاں طلب کرتے ہیں، کبھی کوئی سوال کرتے ہیں، تو آپ ان سے کہہ دیجئے کہ اللہ نے روزی کے خزانے میرے حوالے نہیں کردیئے ہیں، کہ میں تمہاری خواہش کے مطابق تمہیں دیتا رہوں، اور پہاڑ کو سونے میں بدلتا رہوں۔ اور نہ میں غیب جانتا ہوں کہ قیامت یا نزول عذاب وغیرہ کا وقت بتا دوں، اور نہ میں فرشتہ ہوں کہ مافوق العا دہ کرتبوں کا مظاہرہ کرتارہوں، میں صرف اس وحی کی تباع کرتاہوں جو اللہ کی طرف سے مجھ پر نازل ہوتی ہے۔ اس کے بعد اللہ نے فرمایا کہ نابینا اور بینا، یعنی گمراہ اور ہدایت برابر نہیں ہو سکتے، اس لیے اے مشرکین مکہ ! تم لوگ اللہ کی نشانیوں میں غور کرکے رشد وہدایت کیہ راہ کیوں نہیں اختیار کے لیتے ؟! کلمہ "وحی "جس طرح قرآن کریم کو شامل ہے۔ اسی طرح نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی احادیث مبارکہ کو بھی شامل ہے، اللہ تعالیٰ سورۃ نجم کی آیات (3/4) میں فرمایا ہے میرے رسول اپنی خواہش کے مطابق نہیں بولتے، بلکہ وہی کچھ کہتے ہیں جو بذریعہ وحی ان پر نازل ہوتا ہے "اور سورۃ انعام آیت (50) میں فرمایا ہے : کہ میں تو صرف وحی کی اتباع کرتا ہوں "اور سورۃ نحل (44) میں فرمایا ہے : تاکہ آپ لوگوں کے سامنے اس وحی کو بیان کردیں جو آپ پر نازل ہوتی ہے، اور صحیح حدیث میں رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا ہے " مجھے قرآن کریم کا اور اسی کے مانند (یعنی حدیث) دی گئی ہے