سورة ص - آیت 67

قُلْ هُوَ نَبَأٌ عَظِيمٌ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

آپ کہہ دیجئے کہ وہ ایک بہت بڑی خبر ہے

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(29) اور اے میرے نبی ! آپ کفار قریش سے یہ بھی کہہ دیجیے کہ یہ قرآن کریم آپ کے رب کی ایک عظیم کتاب ہے، جس میں توحید باری تعالیٰ خاتم النبین کی نبوت بعث بعد الموت اور جنت و جہنم سے متعلق سچی اور یقینی خبریں ہیں اور وحی کے ذریعہ مجھ پر اس کا نزول بلاشبہ میرے صداقت کی بڑی دلیل ہے۔ لیکن اے کفار قریش، تم لوگ اپنی غفلت و بے حسی میں اس قدر آگے جا چکے ہو کہ اس سے اعراض کر رہ یہو کیا تم سوچتے نہیں ہو کہ نزول قرآن سے پہلے تو مجھ اس کی کوئی خبر ہی نہیں تھی کہ جب اللہ نے فرشتوں سے کہا کہ میں مٹی سے آدمی کو پیدا کرنا چاہتا ہوں اور میں زمین میں اسے اپنا خلیفہ بناؤں گا، تو فرشتوں نے اللہ سے جھگڑا کیا اور کہا کہ اے اللہ ! کیا تو زمین میں ایسوں کو پیدا کرے گا جو اس میں فساد برپا کریں گے اور خونریزی کریں گے؟ یہ بات تو مجھے بذریعہ وحی معلوم ہوئی ہے۔ اے کفار قریش ! مجھ پر تو اللہ کی صرف یہ وحی نازل ہوتی ہے کہ میری ذمہ داری لوگوں کو کھلم کھلا اللہ کے عذاب سے ڈرانا ہے، میں اپنی طرف سے کوئی بات نہیں کہتا اور نہ ہی مجھے یہ حکم دیا گیا ہے کہ لوگوں کو اسلام میں داخل کرنے کے لئے ان کے ساتھ جبر و تشدد سے کام لوں۔