سورة الانفال - آیت 26

وَاذْكُرُوا إِذْ أَنتُمْ قَلِيلٌ مُّسْتَضْعَفُونَ فِي الْأَرْضِ تَخَافُونَ أَن يَتَخَطَّفَكُمُ النَّاسُ فَآوَاكُمْ وَأَيَّدَكُم بِنَصْرِهِ وَرَزَقَكُم مِّنَ الطَّيِّبَاتِ لَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور وہ وقت یاد کرو جب (مکہ میں) تمہاری تعداد بہت تھوڑی تھی اور تم ملک میں کمزور سمجھے جاتے تھے، تم اس وقت ڈرتے تھے کہ کہیں لوگ تمہیں اچانک نہ لے جائیں، پھر اللہ نے تمہیں (مدینہ میں) ٹھکانا دیا، اپنی مددگاری سے قوت بخشی اور اچھی چیزیں دے کر رزق کا سامان مہیا کردیا تاکہ تم شکر گزار ہوا۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(20) مکہ میں جب لوگوں نے اسلام کے پہلے پہل قبول کیا وہ بڑی آزمائش سے گذرے ان کی تعداد تھوڑی تھی، ڈرتے تھے کہ کہیں اعدائے ت اسلام ایک ہی حملہ میں انہیں ختم نہ کردیں تو اللہ تعالیٰ نے آہستہ آہستہ ان کی تعداد بڑھائی انہیں مدینہ میں پناہ دی انہیں قوت عطا کی اور میدان بدر میں فرشتوں کے ذریعہ ان کی مدد فرمائی اور مال غنیمت کو ان کے لیے حلال بنا کر ان کی تنگد ستی دور کی آیت میں صحابہ کرام کے انہی حالات کی طرف اشارہ ہے تاکہ وہ انہیں یاد کر کے اللہ کا احسان مانیں اور اس کا شکر ادا کریں۔ قتادہ بن دعامہ سیدوسی نے اس آیت کی تفسیر کے ضمن میں کہا ہے کہ عرب والے سب سے ذلیل تھے، سب سے زیادہ بھوکے تھے سب سے زیادہ ننگے تھے اور سب سے زیادہ گمراہ تھے، اللہ کی قسم اہل زمین میں ان سے زیادہ گھٹیا اور کوئی قوم نہیں تھی، یہاں تک کہ اسلام آیا جس کے ذریعہ اللہ نے انہیں اپنے وطن میں قرار دیا اور ان کی روزی میں وسعت دی اور انہیں لوگوں کا باشاہ بنادیا، اے عرب کے لوگو ! یہ سب کچھ تمہیں اسلام کے ذریعہ ملا ، اس لیے کہ تم لوگ اللہ کا شکر ادا کرو اس لیے کہ تمہارا رب منعم ہے اور شکر کو پسند کرتا ہے اور جو شکر ادا کرتا ہے اللہ اسے اور دیتا ہے۔