سورة الاعراف - آیت 117

وَأَوْحَيْنَا إِلَىٰ مُوسَىٰ أَنْ أَلْقِ عَصَاكَ ۖ فَإِذَا هِيَ تَلْقَفُ مَا يَأْفِكُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور (اس وقت) ہم نے موسیٰ پر وحی کی کہ تم بھی اپنی لاٹھی (میدان میں) ڈال دو، جونہی اس نے لاٹھی پھینکی تو اچانک کیا ہوا کہ جو کچھ جھوٹی نمائش جادوگروں کی تھی سب (آنا فانا) اس نے نگل کر نابود کردی۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(60) اس وقت اللہ تعالیٰ نے اپنے بندے موسیٰ (علیہ السلام) کو بذریعہ وحی حکم دیا اب تمہارے دائیں ہاتھ میں جو لاٹھی ہے اسے ڈال دو، انہوں نے ایسا ہی کیا، اور وہ لاٹھی جادو گروں کے تمام جھوٹے سانپوں کو نگلنے لگی یہ دیکھ کر فرعوب، اس کے کارکنان اور اس قوم کے لوگ ذلیل ورسوا اپنے گھروں کو لوٹنے لگے اور جادوگر کہتے ہوئے سجدہ میں گر گئے۔ ابن عباس (رض) کہتے ہیں کہ وہ لاٹھی ان کی رسیوں اور لکڑیوں کو نگلتی چلی گئی، یہ منظر دیکھ کر جا دوگر سمجھ گئے کہ یہ آسمانی معجزہ ہے، کوئی جادو نہیں، چنانچہ تمام جادو گر اللہ کے لیے سجدہ میں گر گئے، اور پکار اٹھے کہ ہم رب العالمین پر ایمان لے آئے جو موسیٰ اور ہارون کا رب ہے، علمائے تفسیر لکھتے ہیں کہ انہوں نے رب موسیٰ وھارون کی قید اس لیے لگائی تاکہ فرعون کو اپنا معبود سمجھنے والے یہ نہ گمان کریں کہ انہوں نے فرعون کے لے سجدہ کیا ہے۔