سورة غافر - آیت 16

يَوْمَ هُم بَارِزُونَ ۖ لَا يَخْفَىٰ عَلَى اللَّهِ مِنْهُمْ شَيْءٌ ۚ لِّمَنِ الْمُلْكُ الْيَوْمَ ۖ لِلَّهِ الْوَاحِدِ الْقَهَّارِ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

جس دن کہ سب لوگ میدان حشر کی طرف نکل کھڑے ہوں گے ان کی کوئی بات اللہ پر مخفی نہیں ہوگی (اس وقت کہا جائے گا) آج کے دن کس کی بادشاہی ہے ؟ کسی کی نہیں صرف خدائے واحد وقہار کی

تفسیر مکی - مولانا صلاح الدین یوسف صاحب

١٦۔ ١ یعنی زندہ ہو کر قبروں سے نکل کھڑے ہونگے۔ ١٦۔ ١ یہ قیامت والے دن اللہ تعالیٰ پوچھے گا جب سارے انسان اس کے سامنے میدان محشر میں جمع ہوں گے اللہ تعالیٰ زمین کو اپنی مٹھی میں اور آسمان کو اپنے دا‏ئیں ہاتھ میں لپیٹ لے گا اور کہے گا میں بادشاہ ہوں زمین کے بادشاہ کہاں ہیں؟ (صحیح بخاری)، ١٦۔ ١ جب کوئی نہیں بولے گا تو یہ جواب اللہ تعالیٰ خود ہی دے گا بعض کہتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ کے حکم سے ایک فرشتہ منادی کرے گا جس کے ساتھ ہی تمام کافر اور مسلمان بیک آواز یہی جواب دیں گے۔ فتح القدیر