سورة السجدة - آیت 23

وَلَقَدْ آتَيْنَا مُوسَى الْكِتَابَ فَلَا تَكُن فِي مِرْيَةٍ مِّن لِّقَائِهِ ۖ وَجَعَلْنَاهُ هُدًى لِّبَنِي إِسْرَائِيلَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور یقینا ہم نے موسیٰ کو کتاب عطا کی تھی لہذا آپ اس کتاب کے ملنے میں کسی قسم کاشک نہ کیجئے اور ہم نے اس تورات کو بنی اسرائیل کے لیے رہنما بنایا تھا (٦)۔

تفسیر اشرف الحواشی - محمد عبدہ الفلاح

ف ٣” اس کے طعنے میں شک نہ کرے“ کے مفسرین (رح) نے کئی مطالب بیان کئے ہیں۔ ایک یہ کہ آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) موسیٰ ( علیہ السلام) سے ملاقات ہونے میں شک نہ کریں۔ چنانچہ معراج کے موقع پر آسمان پر بھی اور بیت المقدس میں بھی نبیﷺ کی ان سے ملاقات ہوئی اور قیامت کے روز بھی ہوگی۔ تیسرایہ کہ جس طرح موسیٰ ( علیہ السلام) کو کتاب ملنے میں شک نہ کریں۔ تیسرایہ کہ جس طرح موسیٰ ( علیہ السلام) کو کتاب ( توراۃ) دی گئی اسی طرح آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کو یہ کتاب ( قرآن) دی گئی ہے اس کے ہماری طرف سے ہونے میں کوئی شک نہیں ہونا چاہئے وغیرہ ( شوکانی) ف ٤” وجعلناہ“ میں ” ہ“ کی ضمیر کتاب کے لیے ہے۔ پہلے اسی مضمون کی آیت سورۂ اسراء میں گزر چکی ہے ( دیکھئے آیت ٢١)۔