سورة الملك - آیت 28

قُلْ أَرَأَيْتُمْ إِنْ أَهْلَكَنِيَ اللَّهُ وَمَن مَّعِيَ أَوْ رَحِمَنَا فَمَن يُجِيرُ الْكَافِرِينَ مِنْ عَذَابٍ أَلِيمٍ

ترجمہ مکہ - مولانا جوناگڑھی صاحب

آپ کہہ دیجئے! اچھا اگر مجھے اور میرے ساتھیوں کو اللہ تعالیٰ ہلاک کر دے یا ہم پر رحم کرے (بہر صورت یہ تو بتاؤ) کہ کافروں کو دردناک عذاب سے کون بچائے گا ؟ (١)

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(١٦) نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی تکذیب کرنے والے اور آپ کی دعوت کو ٹھکرانے والے، آپ سے شدید بغض و عداوت کی وجہ سے اپنے دلوں میں ت منا کرتے تھے کہ کاش یہ شخص مر جاتا اور اس کے ساتھی بھی ہلاک ہوجاتے تو ایمان و اسلام کی باتوں سے ہمیں نجات مل جاتی اور آئے دن کا جھگڑا ختم ہوجاتا، اللہ تعالیٰ نے ان کے دل کے اس خبث کو واضح کردیا اور نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے انیں یہ بتانے کا حکم دیا کہ اے کفار قریش ! اگر اللہ مجھے اور میرے اہل ایمان ساتھیوں کو اس دنیا سے اٹھا لیتا ہے تو اس سے تمہیں کوئی فائدہ نہیں پہنچے گا، کیونکہ تمہارا کفر اللہ کے نزدیک ثابت ہوچکا ہے اور تم اس کے عذاب کے مستحق بن چکے ہو اور جب اس کا عذاب تم پر نازل ہوگا اور تم جہنم رسید ہوگۓ تو کوئی نہیں ہوگا جو تمہیں اسکے درد ناک عذاب سے بچا سکے گا۔