سورة الشعراء - آیت 185

قَالُوا إِنَّمَا أَنتَ مِنَ الْمُسَحَّرِينَ

ترجمہ مکہ - مولانا جوناگڑھی صاحب

انہوں نے کہا تو ان میں سے ہے جن پر جادو کردیا جاتا ہے۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

47۔ شعیب (علیہ السلام) کی اس طویل تقریر کا ان کی قوم پر کوئی اثر نہیں ہوا، اور جیسا کہ قوم ثمود نے صالح (علیہ السلام) سے کہا تھا، اصحاب مدین نے بھی شعیب (علیہ السلام) سے کہا کہ تم پر تو جادو کردیا گیا ہے، جس کی وجہ سے تمہاری عقل ماری گئی ہے، اور ایسی بہکی بہکی باتیں کرتے ہو، تم ہمارے ہی جیسے انسان ہو، اور دعوی کر بیٹھے ہو کہ اللہ نے تمہیں ہمارے لیے رسول بنا کر بھیجا ہے۔ ہمیں یقین ہے کہ تم جھوٹے ہو اس لیے زبان دعوی سے کام نہیں چلے گا، اگر تمہیں اپنی صداقت پر اصرار ہے تو آسمان کے ٹکرے ہمارے سروں پر گرا کر ہمیں ہلاک کردو۔ شعیب (علیہ السلام) نے ان کے اس کفر وعناد کا یہ جواب دیا کہ اللہ تعالیٰ تمہارے کفر اور دیگر معاصی سے خوب باخبر ہے، اور اسے خوب معلوم ہے کہ تم کس عذاب کے حقدار ہو، جب تمہارا نوشتہ وقت آجائے گا تو وہ اپنے علم کے مطابق تمہارے اعمال کا تمہیں بدلہ دے گا۔