سورة الكهف - آیت 107

إِنَّ الَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ كَانَتْ لَهُمْ جَنَّاتُ الْفِرْدَوْسِ نُزُلًا

ترجمہ مکہ - مولانا جوناگڑھی صاحب

جو لوگ ایمان لائے اور انہوں نے کام بھی اچھے کئے یقیناً ان کے لئے فردوس (١) کے باغات کی مہمانی ہے

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(٦٣) کافروں کا انجام بیان کیے جانے کے بعد اب ان لوگوں کا حال و مآل بیان کیا جارہا ہے جو اس دنیا میں اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لے آئیں گے، نبی کریم پر نازل کردہ کتاب کی تصدیق کریں گے، اور زندگی میں نیک اعمال کرتے رہیں گے کہ اللہ تعالیٰ نے ان کی میزبانی کے لیے فردوس برین کو تیار کر رکھا ہے، جہاں ہمیشہ کے لیے رہیں گے، اور کبھی اور کسی حال میں بھی وہاں سے نکلنا نہیں چاہیں گے۔ صحیحین کی روایت ہے کہ نبی کریم نے فرمایا ہے : تم لوگ جب اللہ سے جنت مانگو تو فردوس مانگو جو جنت کا مرکزی اور اعلی مقام ہے، جنت کی ساری نہریں وہیں سے نکلتی ہیں۔ وہ جنت اتنی اچھی ہوگی کہ وہاں کا رہنے والا جنتی اسے چھوڑ کر کبھی بھی دوسری جگہ جانا نہیں چاہے گا۔ اے اللہ ! میں آپ سے جنت الفردوس کا سوال کرتا ہوں اپنے لیے، اپنے والدین کے لیے، اپنے اہل و عیال، بہن بھائیوں اور قرآن و سنت پر عمل پیرا تمام مسلمان بھائیوں کے لیے۔ آمین یا رب العالمین۔