سورة الأعلى - آیت 1

سَبِّحِ اسْمَ رَبِّكَ الْأَعْلَى

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اے نبی اپنے رب کے نام کی تسبیح کرتے رہوجو سب سے اعلیٰ ہے

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(١) اللہ تعالیٰ نے نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) اور آپ کی امت کو حکم دیا ہے کہ وہ اپنے رب کی پاکی بیان کریں، اعلان کریں کہ باری تعالیٰ اولاد، بیوی اور ہر شریک سے پاک ہے، اس کا کوئی ساجھی نہیں، اور نہ اس کا کوئی ہم نام ہے، اس کا نام کسی گندی جگہ پر نہ لیا جائے اور جب بھی اس کا نام لیا جائے تو غایت اجلال و احترام کے ساتھ، کیونکہ وہ اپنی تمام مخلوق سے اعلیٰ وا رفع ہے اور سب اس کے نیچے ہے، وہ ہر چیز پر قاہر و غالب ہے اور سب پر اسی کا حکم نافذ ہوتا ہے سورۃ الصافات آیت (١٨٠) میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے : (سبحان ربک رب العزۃ عما یمفون) ” اے میرے نبی ! آپ کا رب جو بہت بڑی عزت والا ہے، وہ ہر اس بات سے پاک ہے جو مشرکین اس کے بارے میں بیان کرتے ہیں“ سعید بن منصور، عبد بن حمید، ابن جریر، ابن المنذر اور حاکم وغیرہ نے ابن عباس، ابن عمر، ابن الزبیر وغیرہم سے روایت کی ہے کہ جب یہ حضرات نماز میں (سبع اسم ربک الاعلی) پڑھتے تو اس کے بعد ” سبحان ربی الاعلی“ کہتے انتہی یعنی اس آیت کریمہ میں آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کو جو حکم دیا گیا تھا کہ وہ اپنے ارفع و اعلیٰ رب کی پاکی بیان کریں اس کو فوراً بجالاتے ہوئے کہتے کہ میرا اعلیٰ وا رفع رب تمام عیوب و نقائص سے پاک ہے۔