سورة الحشر - آیت 21

لَوْ أَنزَلْنَا هَٰذَا الْقُرْآنَ عَلَىٰ جَبَلٍ لَّرَأَيْتَهُ خَاشِعًا مُّتَصَدِّعًا مِّنْ خَشْيَةِ اللَّهِ ۚ وَتِلْكَ الْأَمْثَالُ نَضْرِبُهَا لِلنَّاسِ لَعَلَّهُمْ يَتَفَكَّرُونَ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اگر اس قرآن کو ہم کسی پہاڑ پر نازل کرتے تو آپ دیکھتے کہ وہ اللہ کے خوف سے دب جاتا اور پھٹ پڑتا۔ یہ مثالیں لوگوں کے سامنے ہم اس لیے بیان کرتے ہیں تاکہ وہ غور کریں

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(15) اہل جنت اور اہل جہنم کا فرق مراتب بیان کئے جانے کے بعد، اب قرآن کریم کی عظمت شان بیان کی جا رہی ہے اور کہا جا رہا ہے کہ یہ وہ کتاب عظیم ہے جسے سن کر لوگوں کے دلوں میں اللہ کی خشیت پیدا ہونی چاہئے اور ان پر غایت درجہ کی رقت طاری ہونی چاہئے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ اگر ہم پہاڑوں کو قرآن کی عظمت و جلال کا ادراک دے دیتے اور انہیں اس میں موجود اوامرونواہی کا پابند بنا دیتے تو وہ اللہ کی عظمت و کبریائی کے لئے ہر دم جھکے رہتے اور اس کے شدت خوف سے ٹکڑے ٹکڑے ہوجاتے لیکن انسان اپنی حقیقت کو فراموش کر گیا کہ وہ منی کے ایک حقیر قطرہ سے پیدا گیا ہے اور وہ اللہ کی قدرت کے سامنے نہایت کمزور و ناتواں ہے اور کبر و غرور میں مبتلا ہوگا ی، اس لئے اس کا دل سخت ہوگیا تو اللہ نے اس پر رحم کرتے ہوئے پہاڑ کی مذکور بالا مثال دی تاکہ اس میں غور کر کے اپنی حالت بدلے، کبر و غرور سے باز آئے اور اللہ کی کبریائی کا تصور کر کے اس سے ہر دم خائف و ترساں رہے۔