سورة الحديد - آیت 1

سَبَّحَ لِلَّهِ مَا فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ ۖ وَهُوَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اللہ کی تسبیح کرتی ہے جو چیز زمین اور آسمانوں میں ہے، وہ زبردست اور خوب حکمت والا ہے

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(١) آسمانوں اور زمین میں جتنے حیوانات، نباتات اور جمادات ہیں سب اللہ کی پاکی اور بڑائی بیان کرتے ہیں اور اس بات کا اظہار کرت ہیں کہ وہ ذات برحق ہر قسم کے ساجھی اور اولاد وغیرہ سے پاک ہے، اور اکیلا ہے اور ہر قسم کی عبادت کا تنہا حقدار ہے۔ ربوبیت، الوہیت، علم، قدرت اور مخلوقات کی تدبیر میں اس کا کوئی شریک نہیں ہے۔ آسمانوں اور زمین کی تمام مخلوقات اپنے اپنے حسب حال اپنے رب کی پاکی بیان کرتی ہیں۔ کوئی اپنی زبان سے تسبیح پڑھتا ہے، جیسے فرشتے اور جن و انس اور کسی کی ہئیت و حالت سے آشکار ہوتا ہے کہ اس کا خالق تمام عیوب و نقائص سے پاک ہے، جیسے آسمان و زمین، درخت، نباتات اور پہاڑ وغیرہ، زجاج کہتے ہیں کہ نباتات و جمادات بھی زبان قال سے ہی تسبیح پڑھتے ہیں، لیکن ہم اسے سمجھ نہیں پاتے ہیں، جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے سورۃ الاسراء آیت (٤٤) میں فرمایا ہے : (وان من شی اء الا یسبح بحمدہ ولکن لاتفقھون، تسبیحھم) کہ ” ہر چیز اپنے خالق کی تسبیح بیان کرتی ہے، لیکن تم ان کی تسبیح کو سمجھ نہیں پاتے ہو“ اور سورۃ الانبیاء آیت (٧٩) میں فرمایا ہے : (وسخرنا مع داؤد الجبال یسبحن) کہ ” ہم نے داؤد کے لئے پہاڑوں کو مخسر کردیا تھا، جو ان کے ساتھ تسبیح پڑھا کرتے تھے“ زجاج کہتے ہیں کہ اگر پہاڑ اپنی زبان قال سے تسبیح نہ پڑھتے، بلکہ مقصود یہ ہوتا کہ ان کی خلقت اس بات پر دلالت کرتی ہے کہ ان کا خالق تمام عیوب و نقائص سے پاک ہے، تو اس کے ذکر کرنے میں داؤد (علیہ السلام) کے لئے کوئی خصوصیت نہ ہوتی، اس لئے معلوم ہوا کہ وہ پہاڑ اپنی زبان قال سے داؤد (علیہ السلام) کے ساتھ تسبیح پڑھتے تھے جسے وہ سمجھتے تھے۔ آیت میں اللہ کی دو صفات (العزیز الحکیم) بیان کی گئی ہیں، جن کا مفہوم یہ ہے کہ وہ بڑا قوی ہے جو آسمانوں اور زمین کی ہر چیز پر غالب ہے اور اس نے تمام موجودات کو اپنی جانی بوجھی حکمت کے مطابق منظم و مرتب کیا ہے، جس سے کوئی بھی چیز سر موا نحراف نہیں کرسکتی ہے۔