سورة القمر - آیت 33

كَذَّبَتْ قَوْمُ لُوطٍ بِالنُّذُرِ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

لوط کی قوم نے ڈرانے والوں کو جھٹلایا

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(١٧) قوم لوط نے بھی رسولوں کی تکذیب کی اس لئے کہ لوط (علیہ السلام) کی تکذیب گویا سارے رسولوں کی تکذیب تھی یا ان کے نشانیوں کی تکذیب کی جنہیں پیش کر کے لوط (علیہ السلام) نے انہیں دعوت توحید دی تھی۔ گزشتہ کئی سورتوں میں قوم لوط کا ذکر آچکا ہے کہ سدوم اور عموریہ بستیوں کے رہنے والوں میں، مردوں کے ساتھ لواطت کا گناہ پھیل گیا تھا اللہ نے انہیں اس فعل منکر سے تائب ہونے اور راہ راست پر چلنے کے لئے لوط (علیہ السلام) کو نبی بنا کر ان کے پاس بھیجا جو ابراہیم (علیہ السلام) کے بھائی ہاران کے بیٹے تھے، لیکن وہ اپنے گناہوں پر مصر رہے، تو اللہ تعالیٰ نے ان بستیوں کو الٹ دیا اور پھر فرشتہ یا تیز و تند ہوا کے ذریعہ ان پر پتھروں کی ایسی بارش کردی کہ وہ سب کے سب ہلاک ہوگئے، صرف لوط علیہ السلام، ان کی دونوں بیٹیاں اور چند وہ لوگ بچ گئے جو مسلمان ہوگئے تھے یہ لوگ اللہ کے حکم سے رات کے آخری پہر میں ان بستیوں سے نکل گئے، ان مومنوں پر اللہ نے اپنا فضل و کرم کیا کہ عذاب نازل ہونے سے پہلے انہیں وہاں سے نکل جانے کو کہہ دیا۔ اللہ تعالیٰ ہر زمانے میں اپنے نیک اور شکر گزار بندوں کو ان کے نیک اعمال کا اسی طرح اچھا بدلہ دیا کرتا ہے۔