سورة القمر - آیت 9

كَذَّبَتْ قَبْلَهُمْ قَوْمُ نُوحٍ فَكَذَّبُوا عَبْدَنَا وَقَالُوا مَجْنُونٌ وَازْدُجِرَ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

ان سے پہلے نوح کی قوم جھٹلا چکی ہے انہوں نے ہمارے بندے کو جھوٹا قرار دیا اور کہا کہ یہ دیوانہ ہے اور وہ جھڑک دیا گیا

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(٤) آیت (٤) میں جن اقوام گزشتہ کی خبروں کا ذکر آیا ہے، انہی میں سے بعض کی تفصیل بیان کر کے نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کو تسلی دی جا رہی ہے سب سے پہلے اللہ تعالیٰ نے نوح کا ذکر فرمایا کہ اہل قریش سے پہلے قوم نوح نے اللہ کے رسول کی تجذیب کی، انہوں نے ہمارے بندے نوح کی تکذیب کی، انہیں پاگل کہا اور سب و شتم اور مختلف قسم کی ایذا رسانیوں کے ذریعہ انہیں دوت و تبلیغ سے روکا۔ نوح (علیہ السلام) جب اپنی قوم کی ہدایت سے بالکل مایوس ہوگئے اور کفر پر ان کا اصرار اور سرکشی حد سے متجاوز ہوگئی، تو انہوں نے ان پر بد دعا کردی اور اللہ سے کہا کہ اے میرے رب ! میری قوم نے اپنے تمرد و سرکشی کے ذریعہ مجھے مغلوب و عاجز بنا دیا ہے اور مجھے تبلیغ رسالت سے سختی کے ساتھ روک دیا ہے اب تو ہی ان سے نمٹ اور ان پر اپنا عذاب بھیج دے۔