سورة النجم - آیت 5

عَلَّمَهُ شَدِيدُ الْقُوَىٰ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اسے زبردست قوت والے نے تعلیم دی ہے

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(٣) جبریل (علیہ السلام) کو وہ تعلیمات اللہ سے ملتی تھیں اور جبریل نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کو سکھا دیتے تھے۔ آیت میں (شدید القوی) سے مراد اکثر مفسرین کے نزدیک جبریل (علیہ السلام) ہیں، جیسا کہ سورۃ التکویر آیات (١٩/٢٠) میں آیا ہے : (انہ لقول رسول کریم، ذی قوۃ عند ذی العرش مکین) ” یقیناً یہ ایک بزرگ رسول کا قول ہے، جو قوت والا ہے، عرش والے کے نزدیک بلند مرتبہ ہے۔ “ اور وہ فرشتہ بڑا ہی صاحب عقل و دانش اور صائب الرائے ہے، وہ محمد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کو تعلیم دینے کے بعد آسمان کے بعد آسمان میں اپنی جگہ پر لوٹ گیا، بعض لوگوں نے ” فاستوی“ کا معنی یہ بیان کیا ہے کہ وہ فرشتہ نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے پاس اپنی اصلی شک میں آیا، دحیہ کلبی کی شکل میں نہیں، جن کی شکل میں عام طور پر رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے پاس آیا کرتا تھا، حافظ ابن کثیر نے (فاستوی، وھو بالافق الاعلی) کا معنی حسن، مجاہد، قتادہ اور ربیع بن انس سے یہ نقل کیا ہے کہ جبریل افق کی بلندیوں میں ظاہر ہوئے۔