سورة غافر - آیت 47

وَإِذْ يَتَحَاجُّونَ فِي النَّارِ فَيَقُولُ الضُّعَفَاءُ لِلَّذِينَ اسْتَكْبَرُوا إِنَّا كُنَّا لَكُمْ تَبَعًا فَهَلْ أَنتُم مُّغْنُونَ عَنَّا نَصِيبًا مِّنَ النَّارِ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

پھر وہ لوگ جہنم میں ایک دوسرے سے جھگڑیں گے، دنیا میں جو لوگ کمزور تھے وہ بڑوں سے کہیں گے کہ ہم تمہارے تابع تھے کیا تم جہنم کے کچھ حصے سے ہمیں بچاؤ گے

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(٢٥) نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے کہا گیا ہے کہ وہ کیسا وقت ہوگا جب جہنمی جہنم میں آپس میں جھگڑیں گے اور دنیا میں ان میں سے جو لوگ کمزورت ھے اور طاقت و ثروت والے کافروں کے ڈر سے ان کے پیچھے پیچھے چلتے تھے، ان سے کہیں گے کہ دنیا میں تم نے ہمیں اپنی پیروی کرنے پر مجبور کر رکھا تھا اور تمہیں اپنی قیادت و سیادت پر بڑا ناز تھا تو کیا آج عذاب نار کو ہم سے ہلکا کرسکو گے، کیا آج کچھ بھی ہمارے کام آؤ گے؟ تو متکبرین دنیا جو جہنم کی کھائیوں میں جل رہے ہوں گے کہیں گے کہ تمہارے ساتھ ہم بھی جہنم میں ہیں، اگر آج ہم کچھ بھی کرسکتے تھے تو پہلے اپنے آپ کو بچاتے۔ اللہ تعالیٰ نے اپنے بندوں کے درمیان فیصلہ کردیا ہے، اہل جنت کو جنت میں داخل کردیا ہے اور اہل جہنم کو جہنم میں ڈال دیا ہے اب کسی کے لئے کوئی چارہ کار نہیں ہے۔