سورة الصافات - آیت 112

وَبَشَّرْنَاهُ بِإِسْحَاقَ نَبِيًّا مِّنَ الصَّالِحِينَ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اور ہم نے اسے اسحاق کی بشارت دی کہ وہ صالحین میں سے ایک نبی ہے

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(27) ابراہیم (علیہ السلام) جب بوڑھے ہوگئے، اور ان کی بیوی سارہ بھی بوڑھی ہوگئیں، تو اللہ تعالیٰ نے انہیں اسحاق (علیہ السلام) کی بشارت دی، یہ بشارت وہفرشتے لے کر آئے تھے جو قوم لوط کی بستی کو الٹنے کے لئے بھیجے گئے تھے۔ فرشتوں نے جب دونوں کو یہ بشارت دی تو سارہ علیہما السلام اپنی اور اپنے شوہر کی کبر سنی کی وجہ سے شدت تعجب سے کہنے لگیں : (االدوانا عجوزوھذا بعلی شیخا) ” کیا مجھے بچہ ہوگا حالانکہ میں بوڑھی ہوچکی ہوں اور میرے شوہر بھی بوڑھے ہوگئے ہیں۔“ (ہود : ٢٧) آیات (٢١١، ٣١١) میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ ہم نے ابراہیم کو اسحاق کی بشارت دی جو بڑے ہو کر صالح اور نبی ہوں گے اور ہم نے ابراہیم اور اسحاق پر اپنی برکتیں نازل کردیں، یعنی ان کی اولاد میں کثرت ہوگی ان میں انبیاء کا سلسلہ جاری رہے گا ان میں کچھ لوگ بادشاہوں گے اور ہم انہیں ایسی نعمتیں دیں گے جو دوسروں کو نہیں ملیں گی۔ اللہ تعالیٰ نے آگے فرمایا کہ ابراہیم و اسحاق کی اولاد میں کچھ تو مومنین صالحین ہوں گے اور کچھ لوگ کفر و معاصی کا ارتکاب کر کے اپنے آپ پر کھلا ظلم کرنے والے ہوں گے۔ علماء کا اختلاف ہے کہ ذبیح کون تھے۔ اسماعیل یا اسحاق قرطبی اور کچھ دوسرے لوگوں کا خیال ہے کہ ذبیح اسحاق تھے، لیکن راجح یہی ہے کہ وہ اسماعیل تھے، یہ یہودی و نصاریٰ کی کار ستانی ہے کہ انہوں نے جھوٹی روایات گھڑ کر مسلمانوں میں پھیلا دیا، تاکہ نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے ” ابن الذبیحین“ یعنی دو ذبیحوں، اسماعیل اور عبداللہ کا بیٹا ہونے کا شرف چھین لیں، حافظ ابن القیم رحمہ اللہ نے اپنی کتاب ” زاد المعاد“ میں لکھا ہے کہ صحیح قول کے مطابق صحابہ و تابعین اور دیگر علمائے اسلاف کے نزدیک ذبیح اسماعیل ہیں، اسحاق کا ذبیح ہونا بیس وجوہات سے باطل ہے، آگے لکھا ہے میں نے شیخ الاسلام ابن تیمیمہ رحمہ اللہ سے سنا ہے کہ یہ قول یہود و نصاریٰ سے لیا گیا ہے، حالانکہ یہ دعویٰ خود ان کی کتاب کے نص کے ذریعہ باطل ہے تو رات میں ہے، اللہ نے ابراہیم کو حکم دیا کہ وہ اپنے اکلوتے بیٹے کو ذبح کریں اور اہل کتاب اور مسلمان سبھی جانتے ہیں کہ اسماعیل ہی ان کے اکلوتے تھے اسحاق کو ذبیح کہنے والوں کو اس بات سے دھوکہ ہوا ہے کہ ان کے پاس موجود تورات میں ہے کہ (آپ اپنے بیٹے اسحاق کو ذبح کیجیے) حالانکہ یہ جھوٹ اور یہود کی تحریف ہے، اس لئے کہ یہ ذبیح کے اکلوتا ہونے سے متعارض ہے۔ یہود نے حسد کرتے ہوئے یہ افترا پردازی کی تاکہ اولاد اسماعیل کہ یہ شرف حاصل نہ ہو۔ اسحاق ذبیح کیسے ہو سکتے ہیں، اللہ تعالیٰ نے ام اسحاق کو اسحاق اور یعقوب کی بشارت ایک ساتھ دی تھی : (فبشرنا ھاباسحاق ومزرور اسحاق یعقوب) ” ہم نے سارہ کو اسحاق کی بشارت دی اور اسحاق کے بعد ان کے بیٹے یعقوب کی۔“ یہ بات محال ہے کہ انہیں اسحاق کے بیٹے یعقوب کی بشارت دی جائے پھر اسحاق کو ذبح کرنے کا حکم دیا جائے۔ شیخ السلام آگے چل کر کہتے ہیں، اس میں کوئی شبہ نہیں کہ ذبح مکہ میں تھے اسی لئے تو دس تاریخ کو قربانی صفا و مروہ کے درمیان سعی اور رمی جمار جیسے اعمال حج ذبیح اور ان کی ماں کی یاد میں مکہ مکرمہ میں ادا کئے جاتے ہیں اور اس میں بھی کوئی شبہ نہیں کہ مکہ میں اسماعیل اور ان کی ماں ہاجرہ تھیں نہ کہ اسحاق اور ان کی ماں سارہ اور یہی وجہ ہے کہ ذبح کرنے کی جگہ اور زمانہ (بیت حرام) سے وابستہ ہے جسے ابراہیم و اسماعیل نے بنایا تھا اور مکہ میں قربانی کرنا حج بیت اللہ کے شعائر میں سے قرار پایا، جسے دونوں باپ بیٹے نے بنایا تھا، اگر ذبح کرنے کا عمل شام میں ہوا ہوتا تو حج پر قربانی کے شعائر مکہ کے بجائے شام میں ادا ہوتے۔