سورة الأحزاب - آیت 36

وَمَا كَانَ لِمُؤْمِنٍ وَلَا مُؤْمِنَةٍ إِذَا قَضَى اللَّهُ وَرَسُولُهُ أَمْرًا أَن يَكُونَ لَهُمُ الْخِيَرَةُ مِنْ أَمْرِهِمْ ۗ وَمَن يَعْصِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ فَقَدْ ضَلَّ ضَلَالًا مُّبِينًا

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

کسی مومن مرد اور کسی مومن عورت کو یہ حق نہیں ہے کہ جب اللہ اور اس کا رسول کسی معاملے میں فیصلہ کردیں تو پھر اسے اس معاملے میں فیصلہ کرنے کا اختیار حاصل رہے۔ اور جو کوئی اللہ اور اس کے رسول کی نافرمانی کرے گا وہ صریح گمراہی میں پڑ گیا

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(29) اس آیت کریمہ سے زینب بنت حجش (رسول اکرم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی پھوپھی زاد) سے زید بن حارثہ (رض) کی شادی سے متعلق تفصیلات کی ابتدا ہو رہی ہے اور اس کا پس منظر یہ ہے کہ جب اللہ تعالیٰ نے منہ بولے بیٹے کو حقیقی بیٹے کی حیثیت دینے کی قرآن کریم میں ممانعت کردی، جیسا کہ اسی سورت کی آیت (٤) میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے : (وما جعل ادعیائکم ابنا کم) اور آیت (٥) میں فرمایا ہے : (ادعوھم لاباءھم) کہ اللہ نے تمہارے منہ بولے بیٹوں کو حقیقی بیٹوں کی حیثیت نہیں دے دی ہے اور انہیں ان کے باپوں کے نام سے پکارو، تو اس ضمن میں یہ احکامات بھی صادر ہوئے کہ منہ بولا بیٹا وارث نہیں ہوگا اور اس کی مطلقہ بیوی اس کے منہ بولے باپ کیلئے حرام نہیں ہوگی، لیکن عملی طور پر ان احکامات کو قبول کرنا ان لوگوں کے لئے آسان نہیں تھا جو زمانہ جاہلیت سے منہ بولے بیٹے کو حقیقی بیٹے کی حیثیت دیتے تھے۔ ضرورت تھی کہ کسی عملی مثال کے ذریعہ جاہلیت کی اس قبیح عادت پر کاری ضرب لگائی جاتی۔ چنانچہ نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے زینب بنت حجش کو زید بن حارثہ سے شادی کا پیغام دیا، تو انہوں نے معذرت کردی کہ قریش کی ایک خاندانی عورت ایک آزاد کردہ غلام سے شادی نہیں کرسکتی، تو یہ آیت کریمہ نازل ہوئی، جیسا کہ ابن عباس (رض)، قتادہ اور مجاہد وغیرہ ہم نے اس آیت کا سبب نزول بیان کیا ہے، جب زینب کو اس کی خبر ہوئی تو فوراً شادی کی منظوری دے دی اور شادی ہوگئی لیکن زینب ذہنی طور پر اس شادی سے مطمئن نہیں تھیں، زید نے جب دیکھا کہ اس شادی کا کوئی فائدہ نہیں تو رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے زینب کو طلاق دے دینے کی اجازت مانگی، لیکن رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) انہیں روکتے رہے حالانکہ آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) یہ بات جانتے تھے کہ زید کے طلاق دے دینے کے بعد، زینب سے خود شادی کرلیں گے، تاکہ زمانہ جاہلیت کی قبیح عادت پر کاری ضرب لگے، لیکن پھر بھی زید کو طلاق دینے سے منع کرتے تھے، جن کا ذکر آیت (٣٧) میں آیا ہے۔ آیت (٣٦) کا مفہوم یہ ہے کہ کسی معاملے میں اللہ اور اس کے رسول کا حکم صادر ہوجائے تو کسی مومن مرد یا عورت کے لئے یہ اختیار باقی نہیں رہتا کہ اس کی مخالفت کرے اور اپنی یا کسی اور کی رائے پر عمل کرے، اس لئے کہ ایسا کرنا اللہ اور اس کے رسول کی سراسر نافرمانی اور کھلم کھلا گمراہی ہوگی۔ حافظ ابن کثیر لکھتے ہیں کہ اس آیت میں مذکور حکم تمام امور کو شامل ہے، یعنی کسی بھی معاملے میں جب اللہ اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کا حکم صادر ہوجائے، تو کسی کے لئے بھی اس کی مخالفت جائز نہیں ہے اور نہ کسی کے قول یا رائے کی کوئی حیثیت باقی رہ جاتی ہے، جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے سورۃ النساء آیت (٦٥) میں فرمایا ہے : (فلاوربک لایومنون حتی یحکموک فیما شجربینھم ثم لایجدوافی انفسھم حرجا مما قضیت ویسلموا تسلیما) ” آپ کے رب کی قسم ! وہ لوگ مومن نہیں ہو سکتے جب تک آپ کو اپنے اختلافی امور میں اپنا فیصل نہ مان لیں، پھر آپ کے فیصلہ کے بارے میں اپنے دلوں میں کوئی تکلیف نہ محسوس کریں اور پورے طور سے اسے تسلیم کرلیں۔ “