سورة طه - آیت 132

وَأْمُرْ أَهْلَكَ بِالصَّلَاةِ وَاصْطَبِرْ عَلَيْهَا ۖ لَا نَسْأَلُكَ رِزْقًا ۖ نَّحْنُ نَرْزُقُكَ ۗ وَالْعَاقِبَةُ لِلتَّقْوَىٰ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

” اپنے اہل وعیال کو نماز کی تلقین کرو اور خود بھی اس کی پابندی کرو ہم تم سے کوئی رزق نہیں چاہتے رزق ہم تمہیں دیتے ہیں اور انجام کی بہتری تقویٰ میں ہے۔“ (١٣٢)

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

٦٠۔ اس آیت کریمہ میں اللہ تعالیٰ نے نبی کریم کو حکم دیا ہے کہ وہ اپنے گھر والوں کو نماز کا حکم دیں، بعض لوگوں کا خیال ہے کہ یہاں پوری امت مراد ہے، یعنی سب لوگ اپنے گھر والوں کو نماز کا حکم دیں، آپ اس حکم میں بدرجہ اولی داخل ہیں۔ آپ سے کہا گیا ہے کہ آپ نماز کی پابندی کیجیے اور امور دنیا میں مشغول ہو کر اس سے غافل نہ ہوجایے۔ ابن المنذر، طبرانی، اور بیہقی وغیرہم نے عبداللہ بن سلام سے روایت کی ہے جس کی سند کو حافظ سیوطی نے صحیح کہا ہے کہ نبی رکیم کے گھرانے کو جب کوئی پریشانی لاحق ہوتی تو آپ انہیں نماز پڑھنے کا حکم دیتے اور (وامر اھلک بالصلاۃ) پوری آیت پڑھتے۔ اللہ تعالیٰ نے آگے فرمایا کہ ہم آپ سے یہ نہیں کہتے ہیں کہ اپنے لیے اور بال بچوں کے لیے روزی کی فکر میں لگ جایئے اور نماز سے غافل ہوجایئے، آپ کو اور آپ کے گھر والوں کو روزی ہم دیں گے، اور اچھا انجام تقوی والوں کے لیے ہے، شوکانی لکھتے ہیں، آیت کا یہ حصہ اس بات کی قطعی دلیل ہے کہ تقوی ہی تمام بھلائیوں کی جڑ ہے۔