سورة المآئدہ - آیت 86

وَالَّذِينَ كَفَرُوا وَكَذَّبُوا بِآيَاتِنَا أُولَٰئِكَ أَصْحَابُ الْجَحِيمِ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اور جنہوں نے کفر کیا اور ہماری آیات کو جھٹلایا، یہ لوگ بھڑکتی ہوئی آگ میں ڈالے جائیں گے۔“ (٨٦)

تسہیل البیان فی تفسیر القرآن - ام عمران شکیلہ بنت میاں فضل حسین

نصاریٰ بھی اہل کتاب تھے اور یہود بھی اہل کتاب تھے۔ لیکن مسلمانوں کے ساتھ یہود کے رویہ میں عیسائیوں کے مقابلے میں زمین و آسمان کا فرق تھا۔ چاہیے تو یہ تھا کہ یہود بھی عیسائیوں کی طرح مشرکین کی بجائے مسلمانوں کے قریب تر ہوتے، لیکن معاملہ اس کے برعکس تھا۔ یہود نے اللہ کی آیات کو جھٹلا دیا جو تورات میں موجود تھیں اور اس میں تحریف کی ایسے لوگوں کی سزا دوزخ ہی ہوسکتی ہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے: ﴿اِنَّ الَّذِيْنَ كَذَّبُوْا بِاٰيٰتِنَا وَ اسْتَكْبَرُوْا عَنْهَا لَا تُفَتَّحُ لَهُمْ اَبْوَابُ السَّمَآءِ وَ لَا يَدْخُلُوْنَ الْجَنَّةَ حَتّٰى يَلِجَ الْجَمَلُ فِيْ سَمِّ الْخِيَاطِ وَ كَذٰلِكَ نَجْزِي الْمُجْرِمِيْنَ﴾ (الاعراف: ۴۰) یقین جانو جن لوگوں نے ہماری آیات کو جھٹلایا، سرکشی کی ان کے لیے آسمان کے دروازے نہیں کھولے جائیں گے ان کا جنت میں جانا اتنا ہی نا ممکن ہوگا جتنا اونٹ کا سوئی کے ناکے سے گزرنا، مجرموں کو ہمارے ہاں ایسی ہی سزا دی جاتی ہے۔