سورة البقرة - آیت 140

أَمْ تَقُولُونَ إِنَّ إِبْرَاهِيمَ وَإِسْمَاعِيلَ وَإِسْحَاقَ وَيَعْقُوبَ وَالْأَسْبَاطَ كَانُوا هُودًا أَوْ نَصَارَىٰ ۗ قُلْ أَأَنتُمْ أَعْلَمُ أَمِ اللَّهُ ۗ وَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّن كَتَمَ شَهَادَةً عِندَهُ مِنَ اللَّهِ ۗ وَمَا اللَّهُ بِغَافِلٍ عَمَّا تَعْمَلُونَ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

کیا تم کہتے ہو کہ ابراہیم، اسماعیل، اسحاق اور یعقوب اور ان کی اولاد یہودی یا عیسائی تھے۔ پوچھئے کہ کیا تم زیادہ جانتے ہو یا اللہ تعالیٰ زیادہ جانتا ہے۔ اللہ کے نزدیک شہادت چھپانے والے سے بڑا ظالم اور کون ہے؟ اللہ تعالیٰ تمہارے اعمال سے غافل نہیں

تسہیل البیان فی تفسیر القرآن - ام عمران شکیلہ بنت میاں فضل حسین

اس آیت کا مفہوم سمجھنے کے لیے یہ جان لینا ضروری ہے کہ یہودیت اپنے موجودہ نظریات و عقائد کے مطابق تیسری اور چوتھی صدی قبل مسیح وجود میں آئی تھی اور عیسائیت اپنے نظریات و عقائد کے مطابق حضرت عیسیٰ کے آسمان پر اٹھائے جانے کے مابعد کی پیداوار ہے اور ان دو قوموں کے عالم خوب جانتے تھے کہ حضرت ابراہیم ، اسماعیل ، اسحاق، یعقوب اور ان کی اولاد یوسف علیہ السلام بھی اس قسم کی یہودیت اور عیسائیت کی پیدائش سے بہت پہلے وفات پاچکے تھے ۔ مگر یہودی علماء نے عوام کے ذہن اس بات پر پختہ کردیے تھے کہ یہ تمام انبیاء یہودی تھے اور نصاریٰ کے قول کے مطابق یہ سب عیسائی تھے۔ اس آیت سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ یہودی ہوں یا عیسائی یا مسلمان نجات اخروی کے لیے انبیاء صالحین پر بھروسہ کرنا عبث یعنی غلط ہے۔ تم اپنے اعمال کے جواب کے خود ذمہ دار ہو اور نیك و بد عمل كی جزا سزا خود ہی بھگتو گے۔