سورة النبأ - آیت 39

ذَٰلِكَ الْيَوْمُ الْحَقُّ ۖ فَمَن شَاءَ اتَّخَذَ إِلَىٰ رَبِّهِ مَآبًا

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

وہ دن برحق ہے جس کا جی چاہے اپنے رب کی طرف پلٹنے کا راستہ اختیار کر لے

السعدی تفسیر - عبدالرحمن بن ناصر السعدی

اس لیے کہ (ذٰلِکَ الْیَوْمُ الْحَقُّ ۚ) یہ دن ہی سچا (دن) ہے۔ جس میں باطل رائج ہوسکتا ہے نہ جھوٹ فائدہ دے سکتا ہے یہ وہ دن ہے (یقوم الروح) جس میں روح الامین کھڑا ہوگا۔ روح سے مراد جبرائیل ہیں جو تمام فرشتوں میں افضل ہیں۔ (والملائکۃ) اور تمام فرشتے بھی کھڑے ہوں گے (صفا) صف باندھے، اللہ کے حضور سرافگندہ ہو کر (لایتکلمون) وہ کلام نہیں کرسکیں گے۔ سوائے اس بات کے جس کی اللہ اجازت دے۔ پس اللہ تعالیٰ نے ترغیب وترہیب اور تبشیر وانداز کے بعد فرمایا ( فَمَنْ شَاۗءَ اتَّخَذَ اِلٰی رَبِّہٖ مَاٰبًا) پس جو شخص چاہے اپنے رب کے پاس ٹھکانا بنا لے۔ یعنی عمل اور اچھی بات کرلے جو قیامت کے دن اس کیط رف لوٹے گی۔