سورة النبأ - آیت 37

رَّبِّ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ وَمَا بَيْنَهُمَا الرَّحْمَٰنِ ۖ لَا يَمْلِكُونَ مِنْهُ خِطَابًا

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

نہایت مہربان رب کی طرف سے جو زمین و آسمانوں کا اور ان کے درمیان کی ہر چیز کا مالک ہے جس کے سامنے کسی کو بولنے کی ہمت نہیں ہو گی

السعدی تفسیر - عبدالرحمن بن ناصر السعدی

یعنی جس نے انہیں یہ عطیات عطا کیے وہ ان کا رب ہے (رَّبِّ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ) جو آسمانوں اور زمین کارب ہے۔ جس نے ان کو پیدا کیا اور ان کی تدبیر کی۔ (الرحمن) جس کی رحمت ہر چیز پر سایہ کناں ہے۔ پس اس نے ان کی نشونما کی ان پر رحم کیا اور ان کو لطف وکرم سے نوازا حتی کہ انہوں نے بہت کچھ پا لیا۔ پھر اللہ تعالیٰ نے قیامت کے دن اپنی عظمت اور اپنی عظیم بادشاہی کا ذکر فرمایا۔ اس روز تمام مخلوق خاموش ہوگئی کوئی بات نہیں کرے گا (لَا یَمْلِکُوْنَ مِنْہُ خِطَابًا) اس سے بات چیت کرنے کا انہیں اختیار نہیں ہوگا۔