سورة الجن - آیت 3

وَأَنَّهُ تَعَالَىٰ جَدُّ رَبِّنَا مَا اتَّخَذَ صَاحِبَةً وَلَا وَلَدًا

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

کیونکہ ہمارے رب کی شان بہت اعلیٰ اور ارفع ہے اس نے کسی کو اپنی بیوی یا اولاد نہیں بنایا ہے

السعدی تفسیر - عبدالرحمن بن ناصر السعدی

(وانہ تعالیٰ جد ربنا) یعنی ہمارے رب کی عظمت بلند وبالا اور اس کے نام مقدس ہیں (ماتخذا صاحبۃ ولا ولدا) اس نے کسی کو اپنی بیوی بنایا ہے نہ بیٹا۔ پس وہ اللہ تعالیٰ کی بزرگی اور اس کی عظمت سے اس بات کو جان گئے جس سے اس شخص کا ابطال ہوتا ہے جو سمجھتا ہے کہ اللہ تعالیٰ کی بیوی یا اس کی اولاد ہے کیونکہ وہ ہر صفت کمال میں عظمت وکمال کا مالک ہے جبکہ بیوی اور بیٹا بنانا اس کے منافی ہے کیونکہ یہ کمال غنا کی ضد ہے۔