سورة یوسف - آیت 77

قَالُوا إِن يَسْرِقْ فَقَدْ سَرَقَ أَخٌ لَّهُ مِن قَبْلُ ۚ فَأَسَرَّهَا يُوسُفُ فِي نَفْسِهِ وَلَمْ يُبْدِهَا لَهُمْ ۚ قَالَ أَنتُمْ شَرٌّ مَّكَانًا ۖ وَاللَّهُ أَعْلَمُ بِمَا تَصِفُونَ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

” انہوں نے کہا اگر اس نے چوری کی ہے تو بیشک اس سے پہلے اس کے بھائی نے بھی چوری کی تھی۔ یوسف نے اسے اپنے دل میں چھپائے رکھا۔ اسے ان پر ظاہر نہ کیا، کہا برے لوگ ہو اور اللہ زیادہ جاننے والا ہے جو تم بیان کرتے ہو۔“ (٧٧) ”

السعدی تفسیر - عبدالرحمن بن ناصر السعدی

جب یوسف (علیہ السلام) کے بھائیوں نے یہ معاملہ دیکھا، تو (آیت) ” انہوں نے کہا، اگر اس (بھائی) نے چوری کی ہے“ تو یہ کوئی انوکھی بات نہیں ہے۔ (آیت) ” اس سے پہلے اس کے بھائی نے بھی چوری کی تھی“ ان کی مراد یوسف (علیہ السلام) تھے۔ ان کا مقصود خود اپنی براءت کا اظہار کرنا تھا۔ نیز یہ کہ بنیامین اور اس کے بھائی سے چوری صادر ہوئی ہے اور یہ دونوں ہمارے حقیقی بھائی نہیں ہیں۔ یہ ان کی طرف سے یوسف (علیہ السلام) اور ان کے بھائی بنیامین کا مرتبہ گھٹانے کی کوشش تھی۔ اس لئے یوسف (علیہ السلام) نے اس کے جواب کو اپنے دل میں رکھا۔ (آیت) ” اور اس کو ان کے سامنے ظاہر نہیں کیا“ اس لیے ان کی اس بات پر کسی ایسے رد عمل کا اظہار نہ کیا جو انہیں ناگوار گزرے، بلکہ وہ اپنے غصے کو پی گئے اور تمام معاملے کو اپنے دل میں چھپالیا۔ (آیت) حضرت یوسف (علیہ السلام) نے اپنے دل میں کہا : (آیت) ” تم بدتر ہو درجے میں“ کیونکہ تم نے ایک بے بنیاد بات پر ہماری مذمت کی ہے اور خود اس سے بھی بد تر اعمال کے مرتکب ہوئے ہو۔ (آیت) ” اور اللہ خوب جانتا ہے جو تم بیان کرتے ہو۔“ ہماری بابت، جو تم ہمیں سرقہ سے متصف کرتے ہو، اللہ تبارک وتعالیٰ خوب جانتا ہے کہ ہم چوری کے بہتان سے بری ہیں۔