سورة الحاقة - آیت 46

ثُمَّ لَقَطَعْنَا مِنْهُ الْوَتِينَ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اور اس کی شہ رگ کاٹ دیتے

تفسیر مکی - مولانا صلاح الدین یوسف صاحب

٤٦۔ ١ خیال رہے یہ سزا، خاص نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے ضمن میں بیان کی گئی ہے جس سے مقصد آپ کی صداقت کا اظہار ہے۔ اس میں یہ اصول بیان نہیں کیا گیا ہے کہ جو بھی نبوت کا جھوٹا وعدہ کرے تو جھوٹے مدعی کو ہم فورا سزا سے دوچار کردیں گے لہذا اس سے کسی جھوٹے نبی کو اس لیے سچا باور نہیں کرایا جاسکتا کہ دنیا میں وہ مؤخذہ الہی سے بچا رہا۔