سورة الصافات - آیت 112

وَبَشَّرْنَاهُ بِإِسْحَاقَ نَبِيًّا مِّنَ الصَّالِحِينَ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اور ہم نے اسے اسحاق کی بشارت دی کہ وہ صالحین میں سے ایک نبی ہے

تفسیر مکی - مولانا صلاح الدین یوسف صاحب

١١٢۔ ١ حضرت ابراہیم (علیہ السلام) کے مذکورہ واقعے کے بعد اب ایک بیٹے اسحاق (علیہ السلام) کی اور اس کے نبی ہونے کی خوشخبری دینے سے معلوم ہوتا ہے کہ اس سے پہلے جس بیٹے کو ذبح کرنے کا حکم دیا گیا تھا، وہ اسماعیل (علیہ السلام) تھے۔ جو اس وقت ابراہیم (علیہ السلام) کے اکلوتے بیٹے تھے اسحاق (علیہ السلام) کی ولادت ان کے بعد ہوئی ہے۔ مفسرین کے درمیان اس کی بابت اختلاف۔ ہے کہ ذبیح کون ہے، اسماعیل (علیہ السلام) یا اسحاق علیہ السلام؟ امام ابن جریر نے حضرت اسحاق (علیہ السلام) کو اور ابن کثیر اور اکثر مفسرین نے حضرت اسماعیل (علیہ السلام) کو ذبیح قرار دیا ہے اور یہی بات صحیح ہے۔ امام شوکانی نے اس میں تو قف اختیار کیا (تفصیل کے لئے دیکھئے تفسیر فتح القدیر اور تفسیر ابن کثیر