سورة الحج - آیت 9

ثَانِيَ عِطْفِهِ لِيُضِلَّ عَن سَبِيلِ اللَّهِ ۖ لَهُ فِي الدُّنْيَا خِزْيٌ ۖ وَنُذِيقُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ عَذَابَ الْحَرِيقِ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

ایسے شخص کے لیے دنیا میں رسوائی ہے اور قیامت کے دن اس کو ہم آگ کے عذاب کا مزہ چکھائیں گے۔ (٩)

تفسیر مکی - مولانا صلاح الدین یوسف صاحب

٩۔ ١ ثانی اسم فاعل ہے موڑنے والا عطف کے معنی پہلو کے ہیں یہ یجادل سے حال ہے اس میں اس شخص کی کیفیت بیان کی گئی ہے جو بغیر کسی عقلی اور نقلی دلیل کے اللہ کے بارے میں جھگڑتا ہے کہ وہ تکبر اور اعراض کرتے ہوئے اپنی گردن موڑتے ہوئے پھرتا ہے جیسے دوسرے مقامات پر اس کیفیت کو ان الفاظ سے ذکر کیا گیا ہے۔ ( وَلّٰی مُسْتَکْبِرًا کَاَنْ لَّمْ یَسْمَعْہَا) 31۔ لقمان :7) ( لَوَّوْا رُءُوْسَہُمْ) 63۔ المنافقون :5) ( اَعْرَضَ وَنَاٰ بِجَانِبِہٖ) 17۔ الاسراء :83)