سورة عبس - آیت 17

قُتِلَ الْإِنسَانُ مَا أَكْفَرَهُ

ترجمہ عبدالسلام بھٹوی - عبدالسلام بن محمد

مارا جائے انسان! وہ کس قدر ناشکرا ہے۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(٥) اوپر کی آیتوں میں صنادید قریش کے کبر وغرور کا حال بیان کرنے کے بعد، اب اللہ تعالیٰ اپنے مومن بندوں کو ان کافروں کے حال پر حیرت و استعجاب کی دعوت دے رہا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ کافر انسان کے لئے ہلاکت و بربادی ہے اسے کبر و غرور پر کون سی بات ابھارتی ہے، کیا اسے اپنی حقیقت معلوم نہیں کہ اسے اللہ تعالیٰ نے ایک نطفہ حقیر سے پیدا کیا یہ اور مرنے کے بعد گل سڑ کر مٹی ہوجائے گا اور وہ زندگی بھراپنے جسم میں گندگی ڈھوتا پھرتا ہے اگر وہ اپنی حقیقت پر غور کرتا تو کبر و غرور میں مبتلا نہ ہوتا اور قادر مطلق خالق کے وجود اور حشر و نشر پر ایمان لے آتا اور عمل صالح کر کے آخرت میں جنت کا حقدار بنتا ہے۔