سورة الحشر - آیت 2

هُوَ الَّذِي أَخْرَجَ الَّذِينَ كَفَرُوا مِنْ أَهْلِ الْكِتَابِ مِن دِيَارِهِمْ لِأَوَّلِ الْحَشْرِ ۚ مَا ظَنَنتُمْ أَن يَخْرُجُوا ۖ وَظَنُّوا أَنَّهُم مَّانِعَتُهُمْ حُصُونُهُم مِّنَ اللَّهِ فَأَتَاهُمُ اللَّهُ مِنْ حَيْثُ لَمْ يَحْتَسِبُوا ۖ وَقَذَفَ فِي قُلُوبِهِمُ الرُّعْبَ ۚ يُخْرِبُونَ بُيُوتَهُم بِأَيْدِيهِمْ وَأَيْدِي الْمُؤْمِنِينَ فَاعْتَبِرُوا يَا أُولِي الْأَبْصَارِ

ترجمہ عبدالسلام بھٹوی - عبدالسلام بن محمد

وہی ہے جس نے اہل کتاب میں سے ان لوگوں کو جنھوں نے کفر کیا پہلے اکٹھ ہی میں ان کے گھروں سے نکال باہر کیا۔ تم نے گمان نہ کیا تھا کہ وہ نکل جائیں گے اور انھوں نے سمجھ رکھا تھا کہ یقیناً ان کے قلعے انھیں اللہ سے بچانے والے ہیں۔ تو اللہ ان کے پاس آیا جہاں سے انھوں نے گمان نہیں کیا تھا اور اس نے ان کے دلوں میں رعب ڈال دیا، وہ اپنے گھروں کو اپنے ہاتھوں اور مومنوں کے ہاتھوں کے ساتھ برباد کر رہے تھے، پس عبرت حاصل کرو اے آنکھوں والو!

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(2) آیت میں مذکور اہل کتاب کافروں سے مراد بنی نضیر ہیں جو ہارون (علیہ السلام) کی اولاد سے تھے اور رومانیوں کے ظلم سے تنگ آ کر مدینہ چلے آئے تھے اور رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی بعثت کا انتظار کرتے تھے جب آپ مکہ سے ہجرت کر کے مدینہ آئے تو آپ سے دشمنی کرنے لگے اور نوبت بایں جارسید کہ آپ نے انہیں مدینہ سے جلا وطن کردیا، جسے اس آیت میں ” اول حشر“ سے تعبیر کیا گیا ہے، ابن العربی نے لکھا ہے کہ ان کا پہلا حشر مدینہ سے خیبر کی طرف جلا وطن ہونا تھا اور دوسرا حشر خیبر سے شام کی طرف ان کی جلا وطنی تھی اور آخری حشر قیامت کے دن ہوگا کہاں جاتا ہے کہ سر زمین شام ہی میدان محشر بنے گی، عکرمہ کا قول ہے جہ جسے قیامت کے دن سر زمین شام کے میدان محشر بننے میں شبہ ہو وہ اس آیت کو پڑھے۔ بنی نضیر کے قلعے بڑے مضبوط تھے اور وہ اپنی حفاظت کے لئے ہر طرح کا ساز و سامان بھی رکھتے تھے اس لئے صحابہ کرام کے شان و گمان میں بھی یہ بات نہیں تھی کہ وہ اپنے محلات اور قصور چھوڑ کر چلے جانے پر مجبور ہوجائیں گے، لیکن اللہ تعالیٰ نے ان کے دلوں میں ایسا رعب ڈال دیا کہ انہوں نے اپنی جلا وطنی قبول کرلی اور صدیوں میں سے جمے جمائے گھروں اور مال و دولت کو چھوڑ کر وہاں سے ہمیشہ کے لئے نکل گئے۔ (یحزبون بیوتھم بایذیھم وایذی المومنین) الآیۃ کی تفسیر یہ بیان کی گئی ہے کہ جب انہیں اپنی جلا وطنی کا یقین ہوگیا تو سوچا کہ اب ان گھروں پر مسلمان قابض ہوجائیں گے، اس لئے انہوں نے شدت حسد میں آ کر ان گھروں کو اندر سے خراب کرنا شروع کردیا اور مسلمان انہیں مزید تکلیف پہنچانے کے لئے ان گھروں کو باہر سے خراب کرنے لگے اور ان کے کھجور کے درختوں کو کاٹنے لگے۔ زہری، ابن زید اور عروۃ بن زبیر کہتے ہیں کہ جب نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ان کے اس طلب پر راضی ہوگئے کہ وہ اپنے اونٹوں پر جتنا سامان لاد کرلے جا سکیں لے جائیں تو اپنے گھروں سے لکڑیوں اور کھمبوں کو نکال کر اپنے اونٹوں پر لادنے لگے اور جو حصہ باقی بچا اسے مسلمانوں نے خراب کردیا۔ آیت کے آخر میں اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کو اس واقعہ سے عبرت حاصل کرنے کی نصیحت کی ہے کہ زمین میں فساد پھیلانے والوں پر کس طرح اللہ کا عذاب نازل ہوتا ہے اور اللہ کے وعدہ نصرت و تائید اور اپنے دشمنوں کے لئے انجام بد کی وعید دونوں میں کتنی صداقت ہوتی ہے۔