سورة محمد - آیت 25

إِنَّ الَّذِينَ ارْتَدُّوا عَلَىٰ أَدْبَارِهِم مِّن بَعْدِ مَا تَبَيَّنَ لَهُمُ الْهُدَى ۙ الشَّيْطَانُ سَوَّلَ لَهُمْ وَأَمْلَىٰ لَهُمْ

ترجمہ عبدالسلام بھٹوی - عبدالسلام بن محمد

بے شک وہ لوگ جو اپنی پیٹھوں پر پھر گئے، اس کے بعد کہ ان کے لیے سیدھا راستہ واضح ہوچکا، شیطان نے ان کے لیے (ان کا عمل) مزین کردیا اور ان کے لیے مہلت لمبی بتائی۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(١٢) سلسلہ کلام منافقین کے بارے میں ہی ہے، کہ جن لوگوں نے نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) اور دین اسلام کی صداقت ظاہر ہونے کے باوجود نفاق کی راہ اختیار کی، اور جہاد کرنے سے اعراض کیا، درحقیقت شطان نے ان کی نظروں میں نفاق و ارتداد کو خوبصورت بنا دیا اور انہیں بہلایا کہ اب تو لمبی عمر پڑی ہے، خوب داد عیش دے لو، محمد کا ساتھ دے کر کیوں اپنی جان جوکھم میں ڈالو گے۔ ان منافقین کو اللہ تعالیٰ نے گمراہی کے گڈھے میں اس لئے دھکیل دیا کہ انہوں نے مشرکین کے ساتھ مل کر مسلمانوں کے خلاف سازش کی، اور ان سے کہا کہ ہم تمہارے خلاف جنگ نہیں کریں گے، بلکہ دوسروں کو بھی محمد کے ساتھ مل کر تم سے جنگ کرنے سے روکیں گے۔ آیت (٢٦) کے آخر میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ جس وقت وہ لوگ مشرکین کے ساتھ مل کر مسلمانوں کے خلاف خفیہ طور پر سازش کر رہے تھے، اللہ ان کی تمام باتوں کو سن رہا تھا، اس سے ان کا کوئی راز پوشیدہ نہیں تھا، او اب ان ساری باتوں سے اس نے اپنے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) اور مسلمانوں کو باخبر کردیا ہے، جیسا کہ سورۃ الحشر آیت (١١) میں آیا ہے : (الم ترالی الذین نافقوا یقولون لاخوانھم الذین کفروا من اھل الکتاب لئن اخرجنتم لنخرجن معکم ولا نطیع فیکم احدا ابداوان قوتلتم لننصرنکم) ” کیا آپ نے منافقوں کو نہیں دیکھا کہ اپنے اہل کتاب کافر بھائیوں سے کہتے ہیں اگر تم جلا وطن کئے گئے تو ضرور ہم بھی تمہارے ساتھ نکل کھڑے ہوں گے اور تمہاے بارے میں ہم کبھی بھی کسی کی بات نہ مانیں گے اور اگر تم سے جنگ کی جائے گی تو ہم تمہاری مدد کریں گے۔“ مفسرین لکھتے ہیں کہ یہاں اہل کتاب سے مراد بنو قریظہ اور بنو نضیر کے یہود ہیں جن کے ساتھ مل کر منافقین ہمیشہ مسلمانوں کے خلاف سازش کرتے رہتے تھے۔