سورة الزخرف - آیت 83

فَذَرْهُمْ يَخُوضُوا وَيَلْعَبُوا حَتَّىٰ يُلَاقُوا يَوْمَهُمُ الَّذِي يُوعَدُونَ

ترجمہ عبدالسلام بھٹوی - عبدالسلام بن محمد

پس انھیں چھوڑ دے فضول بحث کرتے رہیں اور کھیلتے رہیں، یہاں تک کہ اپنے اس دن کو جا ملیں جس کا ان سے وعدہ کیا جاتا ہے۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(٣٨) نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے کہا گیا ہے کہ اگر مشرکین مکہ آپ کی دعوت توحید کو قبول نہیں کرتے ہیں اور اپنے شرک پر اصرار کرتے ہیں، تو آپ انہیں اپنی باطل پرستی میں بھٹکتا چھوڑ دیجیے اور لہو و لعب میں مشغول رہنے دیجیے، یہاں تک کہ قیامت کا وہ دن آجائے جب اللہ انہیں ان کی افترا پردازی کی وجہ سے جہنم میں ڈال دے گا۔