سورة ابراھیم - آیت 31

قُل لِّعِبَادِيَ الَّذِينَ آمَنُوا يُقِيمُوا الصَّلَاةَ وَيُنفِقُوا مِمَّا رَزَقْنَاهُمْ سِرًّا وَعَلَانِيَةً مِّن قَبْلِ أَن يَأْتِيَ يَوْمٌ لَّا بَيْعٌ فِيهِ وَلَا خِلَالٌ

ترجمہ عبدالسلام بھٹوی - عبدالسلام بن محمد

میرے بندوں سے جو ایمان لائے ہیں، کہہ دے کہ وہ نماز قائم کریں اور اس میں سے جو ہم نے انھیں دیا ہے، پوشیدہ اور ظاہر خرچ کریں، اس سے پہلے کہ وہ دن آئے جس میں نہ کوئی خریدوفروخت ہوگی اور نہ کوئی دوستی۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(٢٢) گذشتہ آیت میں اللہ تعالیٰ کی نعمتوں کی ناشکری کرنے والوں اور اس کے ساتھ غیروں کو شریک بنانے والوں کے بارے میں اللہ نے اپنے رسول کو حکم دیا کہ وہ انہیں بتا دیں کہ ان کا ٹھکانا جہنم ہوگا، اسی لیے قرآن کریم کے طریقہ کے مطابق اب اللہ نے اپنے نبی کو حکم دیا کہ وہ مومنین کو کہہ دیں کہ تم لوگ نماز قائم کرو اور اللہ نے جو روزی دی ہے اس میں سے چھپا کر اور دکھلا کر اللہ کی راہ میں خرچ کرو یعنی زکاۃ ادا کرو، رشتہ داروں پر خرچ کرو اور غیروں کی بھی مدد کرو، اس دن کے آنے سے پہلے جب کسی کی جانب سے کوئی فدیہ قبول نہیں کیا جائے گا، کہ کوئی معاوضہ دے کر اللہ کے عذاب سے جانبر ہوجائے، اور نہ کوئی دوستی کام آئے گی کہ کوئی دوست اپنے دوست کے لیے اللہ کے یہاں سفارش کرے اور اسے عذاب سے نجات دلا دے۔ امام شوکانی لکھتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے دنیاوی زندگی میں راہ خیر میں خرچ کرنے کا حکم دیا ہے جب آدمی خرچ کرنے پر قادر ہوتا ہے، اس قیامت کے دن سے قبل جب وہ اس پر قادر نہیں ہوگا بلکہ وہاں کسی کے پاس مال ہی نہیں ہوگا، اور آیت کے آخری حصے : (من قبل ان یاتی یوم لا بیع فیہ ولا خلال) میں گزشتہ حکم کی تاکید ہے۔ صاحب فتح البیان لکھتے ہیں کہ اس آیت میں قیامت کے دن دوستی کی نفی کی گئی ہے اور سورۃ الزخرف آیت (٦٧) (الاخلاء یومئذ بعضھم لبعض عدو الا المتقین) میں اس دن دوستی کو ثابت کیا گیا ہے تو اس کا جواب یہ ہے کہ اس آیت میں اللہ کی خاطر دوستی کو ثابت کی گئی ہے، یعنی صرف متقیوں کے لیے ثابت کی گئی ہے اور دوسروں سے اس کی نفی کی گئی ہے، بعض لوگوں نے کہا ہے کہ قیامت کے دن مختلف حالات ہوں گے، بعض حالات میں ہر دوست اپنے دوست کو پہچاننے سے انکار کردے گا، اور بعض حالات میں مومنین صالحین اپنے ہی جیسے مومن و صالح دوستوں سے اظہار ہمدردی کریں گے۔