سنن النسائي - حدیث 885

كِتَابُ الِافْتِتَاحِ فَرْضُ التَّكْبِيرَةِ الْأُولَى صحيح أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى قَالَ حَدَّثَنَا يَحْيَى قَالَ حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عُمَرَ قَالَ حَدَّثَنِي سَعِيدُ بْنُ أَبِي سَعِيدٍ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ دَخَلَ الْمَسْجِدَ فَدَخَلَ رَجُلٌ فَصَلَّى ثُمَّ جَاءَ فَسَلَّمَ عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَرَدَّ عَلَيْهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَقَالَ ارْجِعْ فَصَلِّ فَإِنَّكَ لَمْ تُصَلِّ فَرَجَعَ فَصَلَّى كَمَا صَلَّى ثُمَّ جَاءَ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَسَلَّمَ عَلَيْهِ فَقَالَ لَهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَعَلَيْكَ السَّلَامُ ارْجِعْ فَصَلِّ فَإِنَّكَ لَمْ تُصَلِّ فَعَلَ ذَلِكَ ثَلَاثَ مَرَّاتٍ فَقَالَ الرَّجُلُ وَالَّذِي بَعَثَكَ بِالْحَقِّ مَا أُحْسِنُ غَيْرَ هَذَا فَعَلِّمْنِي قَالَ إِذَا قُمْتَ إِلَى الصَّلَاةِ فَكَبِّرْ ثُمَّ اقْرَأْ مَا تَيَسَّرَ مَعَكَ مِنْ الْقُرْآنِ ثُمَّ ارْكَعْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ رَاكِعًا ثُمَّ ارْفَعْ حَتَّى تَعْتَدِلَ قَائِمًا ثُمَّ اسْجُدْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ سَاجِدًا ثُمَّ ارْفَعْ حَتَّى تَطْمَئِنَّ جَالِسًا ثُمَّ افْعَلْ ذَلِكَ فِي صَلَاتِكَ كُلِّهَا

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 885

کتاب: نماز کے ابتدائی احکام و مسائل باب: تکبیر اولیٰ (تکبیر تحریمہ) فرض ہے حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مسجد میں تشریف لائے تو ایک اور آدمی بھی آیا اور اس نے نماز پڑھی۔ پھر وہ آیا اور اس نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو سلام کیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے جواب دیا اور فرمایا: ’’واپس جا ، پھر نماز پڑھ، تو نے نماز نہیں پڑھی۔‘‘ وہ واپس گیا۔ دوبارہ نماز پڑھی جیسے پہلے پڑھی تھی اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا اور سلام کیا۔ آپ نے فرمایا: ’’وعلیک السلام۔ واپس جا، پھر نماز پڑھ، تو نے نماز نہیں پڑھی۔‘‘ اس آدمی نے تین دفعہ ایسے ہی کیا۔ آخر اس آدمی نے کہا: قسم اس ذات کی جس نے آپ کو حق دے کر بھیجا ہے! میں اس سے اچھی نہیں پڑھ سکتا، لہٰذا آپ مجھے سکھا دیجیے۔ آپ نے فرمایا: ’’جب تو نماز کے لیے کھڑا ہو تو (سب سے پہلے) اللہ اکبر کہہ۔ پھر جس قدر تو قرآن پڑھ سکے، پڑھ۔ پھر رکوع کر حتی کہ تجھے رکوع میں اطمینان نصیب ہو۔ پھر سر اٹھا حتی کہ سیدھا کھڑا ہوجائے۔ پھر سجدہ کر حتی کہ سجدے میں تجھے اطمینان حاصل ہو۔ پھر سر اٹھا حتی کہ تو اطمینان سے بیٹھ جائے۔ پھر اپنی ساری نماز میں اسی طرح کر۔‘‘ (۱)اس حدیث کو حدیث مسی، الصلاۃ کہتے ہیں، یعنی وہ حدیث جس میں غلط نماز پڑھنے والے کا ذکر ہے۔ (۲)علماء کا اتفاق ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس حدیث میں فرائض بتلائے ہیں۔ ان کے بغیر نماز گویا ہے ہی نہیں۔ (۳)اس حدیث کی رو سے تکبیر تحریمہ ، قراءت، رکوع اور اس میں اطمینان، سر اٹھانا اور سیدھا کھڑا ہونا ، سجدہ اور اس میں اطمینان، سر اٹھانا اور اطمینان سے بیٹھنا فرائض میں شامل ہیں مگر احناف حضرات اطمینان کو تو نماز میں کسی بھی جگہ ضروری نہیں سمجھتے کیونکہ لغت کے لحاظ سے رکوع اور سجدے کے معنی میں اطمینان داخل نہیں مگر سوچنا چاہیے کہ کیا حدیث کی حیثیت لغت سے بھی کم ہے کہ اگر لغت میں لکھا ہو پھر تو فرض اور صحیح حدیث میں آجائے تو مستحب؟ حالانکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صریح لفظ ہیں: [فانک لم تصل] ’’تحقیق تو نے نماز نہیں پڑھی۔‘‘ اور اس شخص کو تین دفعہ نماز لوٹانے کے لیے کہا گیا۔ چلیں واجب ہی کہہ لیتے۔ افسوس! اسی طرح قومے اور جلسے کو بھی واجب نہیں سمجھتے کہ یہ مقصود نہیں۔ شاید اسی لیے رائے کی مذمت کی گئی ہے۔ (۴)’’جس قدر تو قرآن پڑھ سکے، پڑھ۔‘‘ اسی حدیث کے دوسرے طرق میں سورت فاتحہ کی صراحت ہے۔ گویا یہ پڑھنا سورۂ فاتحہ سے زائد ہے یا اس سے مراد سورۂ فاتحہ ہی ہے کیونکہ سورۂ فاتحہ ہر قرآن خواں کو لازماً آتی ہے۔ اسی سے قرآن کی ابتدا ہوتی ہے۔ (۵)نماز کے واجبات میں سے اگر کوئی چیز رہ جائے یا مسنون طریقے کے مطابق نہ ہو تو نماز باطل ہوجائے گی اور نماز لوٹانا ضروری ہوگا۔ (۶)امربالمعروف اور نہی عن المنکر ہر مسلمان کے لیے ضروری ہے اور اس میں نرمی اور خوش اسلوبی کا معاملہ کرنا چاہیے۔ کسی بھی مسئلے کی وضاحت اور تعلیم میں سختی نہیں کرنی چاہیے۔ (۷)جب دو آدمیوں میں جدائی ہو، اگرچہ وہ چند لمحوں کی ہو، دوبارہ ملنے پر سلام کہنا اور اس کا جواب دینا مشروع ہے۔ (۸)اس حدیث مبارکہ سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ تکبیر اور قراءت صرف عربی ہی میں کی جائے جیسا کہ دیگر صحیح روایات میں اللہ اکبر کی صراحت بھی ہے۔ جو لوگ فارسی یا کسی دوسری زبان میں تکبیر کہنے اور قراءت کرنے کی اجازت دیتے ہیں، ان کے پاس کوئی دلیل نہیں۔ واللہ اعلم۔