سنن النسائي - حدیث 5381

كِتَابُ آدَابِ الْقُضَاةِ فَضْلُ الْحَاكِمِ الْعَادِلِ فِي حُكْمِهِ صحيح أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ قَالَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ عَنْ عَمْرٍو ح وَأَنْبَأَنَا مُحَمَّدُ بْنُ آدَمَ بْنِ سُلَيْمَانَ عَنْ ابْنِ الْمُبَارَكِ عَنْ سُفْيَانَ بْنِ عُيَيْنَةَ عَنْ عَمْرِو بْنِ دِينَارٍ عَنْ عَمْرِو بْنِ أَوْسٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرِو بْنِ الْعَاصِ عَنْ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ إِنَّ الْمُقْسِطِينَ عِنْدَ اللَّهِ تَعَالَى عَلَى مَنَابِرَ مِنْ نُورٍ عَلَى يَمِينِ الرَّحْمَنِ الَّذِينَ يَعْدِلُونَ فِي حُكْمِهِمْ وَأَهْلِيهِمْ وَمَا وَلُوا قَالَ مُحَمَّدٌ فِي حَدِيثِهِ وَكِلْتَا يَدَيْهِ يَمِينٌ

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 5381

کتاب: قضا اور قاضیوں کے آداب و مسائل کا بیان فیصلے میں انصاف کرنے والےحاکم کی فضیلت حضرت عبد اللہ بن عمرو بن عاص﷠ سے روایت ہے کہ نبیٔ اکرمﷺ نے فرمایا: ’’انصاف کرنے والے اللہ تعالیٰ کے ہاں نور کے منبروں پر رحمٰن کی دائٰں جانب ہوں گے۔ جو عدل کرتے ہیں اپنے فیصلوں میں اور اپنے گھر والوں کے ساتھ اور اپنی رعایا کے ساتھ۔‘‘ استاد محمد بن آدم نے اپنی روایت میں کہا: اللہ تعالیٰ کے دونوں ہاتھ داہنے ہی ہیں۔ 1۔ عدل و انصاف سے مراد ہر حق والے کو اس کا حق دینا ہے۔ اور لوگوں سے ان کے مقام و مرتبے کے مطابق سلوک کرنا ہے، خواہ عدالت کی کرسی ہو یا حاکم ک تخت، گھر ہو یا باہر ، مسجد ہو یا مدرسہ۔ 2۔ ’’دائیں جانب‘‘ مراد عزت و احترام ہے کیونکہ دایاں ہاتھ یا دائیں جانب عزت و احترام کی علامت خیال کیے جاتے ہیں ورنہ اللہ تعالیٰ کے دونوں ہاتھ ہی داہنے ہیں، جیسا کہ خود حدیث کے آخری الفاظ صریح ہیں۔ 3۔ ’’نور کے ممبر‘‘ لکڑی اور پتھی کا منبر ہو سکتا ہے تو نور کا کیوں نہیں؟ جب کہ فرشتے قطعاً نوری مخلوق ہیں۔ بعض محققین نے اس سے بلند درجات مراد لیے ہیں مگر منبر کی نفی کی ضرورت نہیں جب کہ انسان کا بایاں دائیں سے ناقص سہوتا ہے۔ 5۔ اس روایت میں اللہ تعالیٰ کے لیے لفظ یدٌ یعنی ’’ہاتھ‘‘ استعمال فرمایا گیا ہے۔ گویا اللہ تعالیٰ کی شان میں یہ لفظ استعمال ہوسکتا ہے ۔ اس سے تشبیہ یا تجسیم لازم نہیں آئے گی۔ اسی طرح آنکھ، کان پاؤں وغیرہ۔ اگر ان لافاظ سے کوئی خرابی لازم آتی ہوتی یا یہ باری تعالیٰ کے شایان شان نہ ہوتے تو قرآن و حدیث میں اللہ تعالیٰ کے لیے یہ الفاظ استعمال نہ ہوتے۔ ان پچیدہ مسائل کو اللہ اور اس کا رسول ہی بہتر جانتے ہیں۔ ہمیں خواہ مخواہ اس میں ٹانگ نہیں اڑانی چاہیے اور اللہ اور اس کے رسولﷺ کو مشورے نہیں دینے چاہئیں۔ رموز مصلحت ملک خسرواں دانند۔ البتہ ہم ان الفاظ سے اللہ تعالیٰ کی ذات میں وہ مفہوم مراد نہیں لے سکتے جو انسانوں وغیرہ میں لیے جاتے ہیں۔ وہ ایسے ہیں جیسے اس کی شان کے لائق ہیں کیونکہ ﴿لَيْسَ كَمِثْلَهٖ شَيْءٌ﴾ (الشوریٰ، 11:42) اللہ تعالیٰ کی ذات اور اس کی صفات ہماری عقل میں آنے والی چیزیں نہیں اور نہ ہماری عقل ان مسائل کو حل کرنے یا سمجھنے کے لیے بنائی گئی ہے اور نہ اس میں یہ استعداد ہی ہے بھلا ایک محدود سے لا محدود کا احاطہ کس طرح ممکن ہے۔ ہمارا کام صرف یہ ہے کہ ہم انہیں تسلیم کریں، استعمال کریں اور حقیقت کی بحث نہ کریں کیونکہ ہم سے ایسی باتیں نہیں پوچھی جائیں گی۔ درحقیقت یہ عقل مندی ہے۔