سنن النسائي - حدیث 4986

كِتَابُ قَطْعِ السَّارِقِ تَعْلِيقُ يَدِ السَّارِقِ فِي عُنُقِهِ ضعيف أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ قَالَ حَدَّثَنِي عُمَرُ بْنُ عَلِيٍّ الْمُقَدَّمِيُّ قَالَ حَدَّثَنَا الْحَجَّاجُ عَنْ مَكْحُولٍ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ مُحَيْرِيزٍ قَالَ قُلْتُ لِفَضَالَةَ بْنِ عُبَيْدٍ أَرَأَيْتَ تَعْلِيقَ الْيَدِ فِي عُنُقِ السَّارِقِ مِنْ السُّنَّةِ هُوَ قَالَ نَعَمْ أُتِيَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِسَارِقٍ فَقَطَعَ يَدَهُ وَعَلَّقَهُ فِي عُنُقِهِ قَالَ أَبُو عَبْد الرَّحْمَنِ الْحَجَّاجُ بْنُ أَرْطَاةَ ضَعِيفٌ وَلَا يُحْتَجُّ بِحَدِيثِهِ

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 4986

کتاب: چور کا ہاتھ کاٹنے کا بیان چور کا ہاتھ کاٹنے کےبعد اس کی گردن میں لٹکا نا حضرت عبد الرحمٰن بن محیریز بیان کرتے ہیں کہ میں نے حضرت فضالہ بن عبید ؓسے پوچھا فرمائیں کیا چور کا ہاتھ اس کے گلے میں لٹکا نا سنت ہے ؟ انہوں نےفرمایا:ہاں ۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے پاس ایک چور لایا گیا ۔آپ نے اس کا ہاتھ کاٹ کر اس کے گلے میں لٹکا دیا۔ ابو عبد الرحمٰن (امام نسائی رح) نے فرمایا :(اس حدیث(اور سابقہ حدیث کا راوی )حجاج بن ارطاۃ ضعیف ہے ۔ اس کی حدیث قابل حجت نہیں ہوتی ۔