سنن النسائي - حدیث 4619

كِتَابُ الْبُيُوعِ السَّلَمُ فِي الزَّبِيبِ صحيح أَخْبَرَنَا مَحْمُودُ بْنُ غَيْلَانَ قَالَ حَدَّثَنَا أَبُو دَاوُدَ قَالَ أَنْبَأَنَا شُعْبَةُ قَالَ حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي الْمُجَالِدِ وَقَالَ مَرَّةً عَبْدُ اللَّهِ وَقَالَ مَرَّةً مُحَمَّدٌ قَالَ تَمَارَى أَبُو بُرْدَةَ وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ شَدَّادٍ فِي السَّلَمِ فَأَرْسَلُونِي إِلَى ابْنِ أَبِي أَوْفَى فَسَأَلْتُهُ فَقَالَ كُنَّا نُسْلِمُ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَعَلَى عَهْدِ أَبِي بَكْرٍ وَعَلَى عَهْدِ عُمَرَ فِي الْبُرِّ وَالشَّعِيرِ وَالزَّبِيبِ وَالتَّمْرِ إِلَى قَوْمٍ مَا نُرَى عِنْدَهُمْ وَسَأَلْتُ ابْنَ أَبْزَى فَقَالَ مِثْلَ ذَلِكَ

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 4619

کتاب: خریدو فروخت سے متعلق احکام و مسائل باب: منقٰی میں بیع سلم کرنا حضرت ابن ابی مجالد سے روایت ہے کہ حضرت ابو بردہ اور حضرت عبد اللہ بن شداد کا بیع سلم کی بابت اختلاف ہو گیا۔ انھوں نے مجھے حضرت ابن ابی اوفٰی رضی اللہ عنہ کے پاس بھیجا۔ میں نے ان سے پوچھا تو انھوں نے فرمایا: ہم رسول اللہ ﷺ کے زمانے میں حضرت ابو بکر اور حضرت عمر ؓ کے زمانے میں گندم، جو، منقٰی اور کھجوروں میں ایسے لوگوں سے بیع سلم کیا کرتے تھے جن کے پاس ہمارے خیال کے مطابق یہ چیزیں نہیں ہوتی تھیں، پھر میں نے حضرت ابن ابزٰی رضی اللہ عنہ سے پوچھا تو انھوں نے بھی ایسا ہی فرمایا۔