سنن النسائي - حدیث 4450

كِتَابُ الضَّحَايَا مَنْ قَتَلَ عُصْفُورًا بِغَيْرِ حَقِّهَا ضعيف أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ قَالَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ عَنْ عَمْرٍو عَنْ صُهَيْبٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو يَرْفَعُهُ قَالَ مَنْ قَتَلَ عُصْفُورًا فَمَا فَوْقَهَا بِغَيْرِ حَقِّهَا سَأَلَ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ عَنْهَا يَوْمَ الْقِيَامَةِ قِيلَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَمَا حَقُّهَا قَالَ حَقُّهَا أَنْ تَذْبَحَهَا فَتَأْكُلَهَا وَلَا تَقْطَعْ رَأْسَهَا فَيُرْمَى بِهَا

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 4450

کتاب: قربانی سے متعلق احکام و مسائل باب: جو شخص چڑیا (یا کسی اور حلال جانور) کو ناحق مارے حضرت عبداللہ بن عمروؓ سے مرفوعاً روایت ہے کہ آپ( ﷺ ) نے فرمایا: ’’جس شخص نے چڑیا یا اس سے بڑے کسی جانور کو ناحق قتل کیا، اللہ تعالیٰ قیامت کے دن اس سے اس کے متعلق پوچھے گا۔‘‘ پوچھا گیا: اللہ کے رسول! اس کا حق کیا ہے؟ آپ نے فرمایا: اس کا حق یہ ہے کہ اسے ذبح کر کے کھائے۔ اس کا سر کاٹ کر پھینک نہ دے۔‘‘ تفصیل کے لیے دیکھئے، حدیث: ۴۳۵۴ کے فوائد و مسائل۔