سنن النسائي - حدیث 3829

كِتَابُ الْأَيْمَانِ وَالنُّذُورِ فِي الْحَلِفِ وَالْكَذِبِ لِمَنْ لَمْ يَعْتَقِدِ الْيَمِينَ بِقَلْبِهِ صحيح أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ يَزِيدَ عَنْ سُفْيَانَ عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ وَعَاصِمٌ وَجَامِعٌ عَنْ أَبِي وَائِلٍ عَنْ قَيْسِ بْنِ أَبِي غَرَزَةَ قَالَ كُنَّا نَبِيعُ بِالْبَقِيعِ فَأَتَانَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَكُنَّا نُسَمَّى السَّمَاسِرَةَ فَقَالَ يَا مَعْشَرَ التُّجَّارِ فَسَمَّانَا بِاسْمٍ هُوَ خَيْرٌ مِنْ اسْمِنَا ثُمَّ قَالَ إِنَّ هَذَا الْبَيْعَ يَحْضُرُهُ الْحَلِفُ وَالْكَذِبُ فَشُوبُوهُ بِالصَّدَقَةِ

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 3829

کتاب: قسم اور نذر سے متعلق احکام و مسائل ولی قصدو ارادے کے بغیر قسم یا جھوٹ کے الفاظ زبان سے نکل جائیں تو؟ حضرت قیس بن ابی غرزہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے‘ انہوں نے فرمایا: ہم بقیع کے بازار میں خریدوفروخت کیا کرتے تھے۔ رسول اللہﷺ ہمارے پاس تشریف لائے۔ ہمیں اس وقت سمسار (دلال) کہا جاتا تھا۔ آپ نے فرمایا: ’’اسے تاجروں کی جماعت!‘‘ تو آپ نے ہمارے سابقہ نام سے بہتر نام رکھا۔ پھر فرمایا: ’’خریدو فروخت کرتے وقت (بلاقصد) قسم اور جھوٹ صادر ہو جاتے ہیں‘ لہٰذا ساتھ ساتھ صدقہ بھی کیا کرو۔‘‘