سنن النسائي - حدیث 329

كِتَابُ الْمِيَاهِ بَاب التَّوْقِيتِ فِي الْمَاءِ صحيح أَخْبَرَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ حُرَيْثٍ الْمَرْوَزِيُّ قَالَ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ عَنْ الْوَلِيدِ بْنِ كَثِيرٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ جَعْفَرِ بْنِ الزُّبَيْرِ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ عَنْ أَبِيهِ قَالَ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ الْمَاءِ وَمَا يَنُوبُهُ مِنْ الدَّوَابِّ وَالسِّبَاعِ فَقَالَ إِذَا كَانَ الْمَاءُ قُلَّتَيْنِ لَمْ يَحْمِلْ الْخَبَثَ

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 329

کتاب: پانی کی مختلف اقسام سے متعلق احکام و مسائل (قلیل اور کثیر )پانی کی تحدید حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے اس پانی کے بارے میں پوچھا گیا جس پر جانور (اور خصوصاً) درندے (پینے کے لیے) آتے جاتے رہتے ہیں؟ آپ نےفرمایا: ’’جب پانی دو مٹکے ہو تو وہ پلید نہیں ہوتا۔‘‘ دیکھیے، حدیث: ۵۲ اور اس کے فوائد و مسائل اور کتاب المیاہ کا ابتدائیہ۔