سنن النسائي - حدیث 2023

كِتَابُ الْجَنَائِزِ بَاب إِخْرَاجِ الْمَيِّتِ مَنْ الْقَبْرِ بَعْدَ أَنْ يُدْفَنَ فِيهِ صحيح أَخْبَرَنَا الْعَبَّاسُ بْنُ عَبْدِ الْعَظِيمِ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ عَامِرٍ، عَنْ شُعْبَةَ، عَنْ ابْنِ أَبِي نَجِيحٍ، عَنْ عَطَاءٍ، عَنْ جَابِرٍ قَالَ: «دُفِنَ مَعَ أَبِي رَجُلٌ فِي الْقَبْرِ فَلَمْ يَطِبْ قَلْبِي حَتَّى أَخْرَجْتُهُ وَدَفَنْتُهُ عَلَى حِدَةٍ»

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 2023

کتاب: جنازے سے متعلق احکام و مسائل میت کو دفن کرنے کے بعد قبر سے نکالنا حضرت جابر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میرے والد (شہید احد) کے ساتھ قبر میں ایک اور شہید بھی دفنائے گئے تھے مگر میرے دل کو یہ اچھا نہ لگا حتی کہ میں نے ان کو نکال کر علیحدہ دفن کیا۔ یہ دفنانے سے چھ ماہ بعد کی بات ہے، اور ان کی میت بالکل اسی طح تھی جس طرح رکھی گئی تھی۔ رضی اللہ عنہ و أرضاہ۔ ثابت ہوا کہ اشد ضرورت ہو تو قبر کشائی کی جا سکتی ہے ورنہ اس سے بچنا بہتر ہے۔