سنن النسائي - حدیث 187

صِفَةُ الْوُضُوءِ الْمَضْمَضَةُ مِنْ اللَّبَنِ صحيح أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ قَالَ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ عَنْ عُقَيْلٍ عَنْ الزُّهْرِيِّ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ شَرِبَ لَبَنًا ثُمَّ دَعَا بِمَاءٍ فَتَمَضْمَضَ ثُمَّ قَالَ إِنَّ لَهُ دَسَمًا

ترجمہ سنن نسائی - حدیث 187

کتاب: وضو کا طریقہ دودھ پینے کے بعد کلی کرنا حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے دودھ پیا، پھر پانی منگوایا اور کلی کی، پھر آپ نے فرمایا: ’’تحقیق اس میں چکناہٹ ہوتی ہے۔‘‘ دودھ کے اثرات خصوصاً چکناہٹ اور مٹھاس منہ میں ہر جاتے ہیں، لہٰذا دودھ پینے کے بعد کلی کرنا مستحب ہے۔